مہاراشٹر ٹی۔ای۔ٹی بد عنوانی معاملہ معاملہ درج,کم و بیش 900 مسلم لڑکے اور 700 مسلم لڑکیاں شامِل

1,895

کنوٹ:(محمد اکرم چوہان)سائبر پولیس اسٹیشن پونے نے سٹی جی آر نمبر 2019-20 میں منعقدہ ٹیچر اہلیت کے امتحان (ٹی ای ٹی µ)میں بدعنوانی کے بارے میں فوجداری مقدمہ 56/2021 درج کیا ہے ۔ چھان بین کے دوران امیدواروں کی جوابی پرچوں کی اچھی طرح جانچ پڑتال کی گئی اور پتہ چلا کہ 7880 امیدواروں نے امتحان میں بدعنوانی کی ہے۔ جس کا مطلب ہے کہ اسی نوعیت کے گھوٹالے میں سپریم کورٹ نے ہدایت کی ہے کہ اگر امتحان میں بڑی بددیانتی ہوئی ہے تو امتحان کو منسوخ نہ کیا جائے اور گھوٹالے میں ملوث امیدواروں کو باہر نکالا جائے۔چونکہ ایگزیکٹو کمیٹی موجود نہیں ہے، ریاستی کونسل کمیٹی کو سزا کا تعین کرنے کے مکمل اختیارات حاصل ہیں۔

ریاستی امتحانی کونسل نے ٹی ای ٹی (ٹیچر کی اہلیت ٹیسٹ اسکام) کے معاملے میں بڑی کارروائی کی ہے۔ کونسل نے 7 ہزار 880 امیدواروں کے خلاف کارروائی کی ہے۔ مہاراشٹر بھر سے کم و بیش 900 مسلم لڑکے اور 700 مسلم لڑکیاں شامِل ہوسکتے ہیں.یہ سبھی آئندہ ٹیچر اہلیت کے امتحان میں شرکت نہیں کر سکیں گے۔پہلی فہرست میں 7500 امیدوار ہیں جو نمبرات میں گڑ بڑی کر کے ناکامیاب ہوتے ہوئے بھی کامیاب بتا ے گئے.دوسری فہرست میں 293 ایسے امیدوار ہے جو امتحان میں نا کامیاب تھے اور انھیں پریکشا پریشد کی طرف سے سرٹیفکیٹ نہیں دیا گیا لیکن ان لوگوں نے جعلی سرٹیفکیٹ بنائے.تیسری فہرست میں 87 امیدوار ہے جو جانچ کے درمیان پکڑے گئے جن میں سے 3 امیدوار امتحان میں غیر حاضر تھے پھر بھی کامیاب بتا ے گئے. دلچسپ بات تو یہ ہے کہ دو ا±میدوار ایسے ہی جنھوں نے امتحان کا فارم بھی نہیں بھرا لیکن کامیاب بتائے گئے.ناندیڑ کے بھی کئی طلباءشامل ہونے کاامکان ہے ۔ساتھ ہی ناندیڑ کے کئی ٹی۔ای۔ٹی کوچنگ کلاسیس اس گھوٹالے میں شامل ہونے کے امکانات ہیں۔سال 2019-20 میں اساتذہ کی اہلیت کے امتحان میں بدعنوانی پائی گئی تھی۔ اس معاملے میں پونے سائبر پولس اسٹیشن میں شکایت درج کرائی گئی تھی۔

اس گھوٹالے میں ایجوکیشن کونسل کمشنر تکارام سوپے کو گرفتار بھی کیا گیا تھا۔یہی نہیں بلکہ کئی کروڑ مالیت کے اثاثے سائبر پولیس کے ہاتھ لگ گئے۔ ان تمام امیدواروں کے خلاف چارج شیٹ پونے سیشن کورٹ میں پیش کی گئی۔ جس کے بعد انتظامیہ متعلقہ امیدواروں کے خلاف نااہلی کی کارروائی کرنے جارہی ہے، آج یہ کارروائی بھی کی گئی۔ ایکشن لینے والے 7 ہزار 880 امیدواروں میں سے جو حاضر سروس ہیں ان کو فارغ کر دیا جائے گا۔ٹیچر اہلیت ٹیسٹ گھوٹالے کا معاملہ سامنے آنے کے بعد ایک سنسنی خیز بات سامنے آئی۔ TET میں نااہل ہونے والے 7880 امیدواروں کو پیسے دے کر کامیاب کرنے کا انکشاف ہوا ہے۔ امتحانی کونسل نے ان امیدواروں کے خلاف بڑی کارروائی کی ہے، ان 7880 امیدواروں میں سے 293 امیدوار ایسے ہیں جنہوں نے جعلی سرٹیفکیٹ تیار کیا تھا اور یہ آج سروس میں ہیں ا±ن کو بھی برطرف کیا جائے گا۔ مہاراشٹر اسٹیٹ ایگزامینیشن کونسل نے 480 صفحات کا پرچہ جاری کیا ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ کونسل نے بدعنوانی کے مرتکب 7880 امیدواروں کی فہرست کا اعلان کیا ہے۔

امتحان میں شامل ہونے والے امیدواروں کا امتحان منسوخ کر دیا گیا ہے۔ جن کی تقرری ہوئی ہے ان کی تقرریاں منسوخ کر دی جائیں گی۔اساتذہ کی اہلیت کے امتحان 2019 (19 جنوری 2020) کے امتحان میں بدعنوانی کی وجہ سے، بدعنوانی میں ملوث امیدواروں کو فوری طور پر برطرف کیا جانا چاہئے اگر ان کی تقرری درج کردہ جرم کے مطابق کی گئی ہے۔ اور اس خط میں احکامات دیئے گئے ہیں کہ مقرر کردہ محکمے اس کا نوٹس لیں۔امتحانی کونسل کی طرف سے بدعنوانی میں ملوث امتحانی امیدواروں کے خلاف جاری کردہ حکم نامہ مہاراشٹر اسٹیٹ ایگزامینیشن کونسل کی ویب سائٹ http://www.mscepune.in اور https://mahatet.in پر شائع کیا گیا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ محکمہ تعلیم کی کارروائی سے کئی لوگ متاثر ہوں گے۔