• 425
    Shares

سعودی عرب میں الدرعیہ کمپنی فار ڈیولپمنٹ کے سربراہ جوناتھن ٹیمز نے انکشاف کیا ہے کہ دارالحکومت ریاض کے شمال میں ایک فیکٹری تعمیر کی جائے گی جہاں کچی مٹی کے گارے کی 18 کروڑ اینٹیں تیار کی جائیں گی۔

یہ اینٹیں الدرعیہ میں مٹی سے بننے والے دنیا کے سب سے بڑے شہر کی تعمیر کرنے میں استعمال ہوں گی۔ٹیمز نے بتایا کہ ’الدرعیہ گیٹ وے‘ کی تعمیر کا کام جاری ہے جو ہاتھوں سے تیار کردہ مٹی کی اینٹوں سے بنایا جا رہا ہے۔

یہ ویسے ہی بنایا جا رہا ہے جیسے کہ مملکت میں 300 برس قبل بنایا گیا تھا۔ یہ گیٹ وے دنیا میں مٹی کے سب سے بڑے شہر کا مرکزی دروازہ ہو گا۔

العربیہ نیوز چینل کے مطابق ٹیمز نے مزید بتایا کہ الدرعیہ میں کُل 38 ہوٹلز ہوں گے جن میں سے 25 ہوٹلز گیٹ وے کے منصوبے میں شامل ہیں۔ان کی تعمیر کا کام 2024 تک مکمل ہو جائے گا۔ اس کے علاوہ الدرعیہ میں 6 مرکزی عجائب گھر بھی ہوں گے۔

گیٹ وے کے منصوبے میں ’الدرعیہ اسکوائر‘ پر ریٹیل کاروبار کے لیے ایک مرکزی منصوبہ، ایجوکیشن اکیڈمی، کنگ سلمان یونیورسٹی اور دیگر منصوبے اور ملحقہ تنصیبات بھی کی جائیں گی۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔