مولانا اسراالحق قاسمی ؒ کیلئے  ادارہ مرکزالعلوم ناندیڑ میں قرآن خوانی ودعا

0 69

ناندیڑ:۷؍ڈسمبر(منور خان) مولانا اسرارالحق قاسمیؒ ایم پی ودارالعلوم دیوبند کے رکن شوریٰ ،کی وفات حسرت آیات پر ادارہ مرکزالعلوم ناندیڑ میں آج قرآن خوانی وتعزیتی نشست ودعا کا اہتمام کیا گیا۔ اس تعزیتی نشست کی صدارت حضرت مولانا مظہر الحق کامل صاحب قاسمی (مہتمم دارالعلوم محمدیہ حمایت نگر ) نے کی ، مولانا سرور قاسمی، مولانا حامداظہر الدین کاشفی (مہتمم ادارہ مرکزالعلوم ناندیڑ)مفتی رضوان قاسمی،مولانا سید عمران ندوی امام وخطیب مسجد قباء ناندیڑ نے بطور خاص شرکت کی ، سینئر صحافی محمد قمرالاسلام ، محمد اظہر راج ،ایڈیٹر بول چال،مولوی محمد شہاب الدین (منتظم ادارہ )ودیگر احباب بھی شریک تھے۔مفتی رضوان قاسمی نے مولانا اسرارالحق قاسمیؒ کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے ان کے انتقال کو ملت کا عظیم خسارہ قرار دیا۔ مولانا عمران ندوی نے کہا کہ مولانا مرحوم ہمہ گیر خدمات کے مالک تھے۔ اللہ تعالیٰ ملت کو ان کا نعم البدل عطاء فرمائے۔ حضرت مولانا مظہرالحق کامل قاسمی نے فرمایا کہ اخلاص وسادگی کے پیکر حضرت مولانا اسرارالحق قاسمیؒ نے اپنی ساری عمرقوم وملت کی علمی دینی سماجی ورفاہی خدمات میںگذاری ،آپ نے سینکڑوں مدارس ومکاتب دینیہ قائم کرتے ہوئے بہار بنگال ،جھارکھنڈمیں علم کا چراغ روشن کیا۔ مولانا مظہرالحق کامل قاسمی نے کہا کہ حضرت مولانا اسرارالحق قاسمی ؒ ،میرے اساذمحترم مولانا محمد معین الدین قاسمی ؒ کی دعوت پر جب ناندیڑ تشریف لائے تھے تو میرے مکان پر ٹہرے تھے اور مجھے ان کی میزبانی کا شرف حاصل ہوا۔ جوان کیلے باعث سعادت ہے۔ مولانا کی خدمت کووہ اپنے لئے اعزاز سمجھتے ہیں۔ انہوں نے اسراالحق قاسمی ؒ سادگی اخلاص کا بطور خاص ذکر کیا۔اپنے اساذ مکرم حضرت مولانا محمد معین الدین قاسمی ؒ کے حوالے سے کہاکہ یہ دونوں علماء دیوبندسے فارغ ہوے والے اپنے وقت کے جید علماء میں شمار ہوتے ہیں۔ مولانا محمد معین الدین قاسمی ؒ کی دعوت پر مولانا اسرارالحق قاسمی ؒ ناندیڑ آئے تھے۔ اور مولانا کے مدرسہ معین العلوم کے احاطے میں واقع مسجد کا سنگ بنیاد بھی رکھا تھا۔ مولانا محمد معین الدین قاسمی ؒ سے ان کے بڑے گہرے تعلقات تھے ۔جو مولانا معین الدین قاسمی ؒ کی رحلت تک قائم رہے۔ مہتمم ادارہ مرکزالعلوم مولانا حامداظہرالدین کاشفی نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہاکہ میر ے والد محترم کے انتقال کے وقت مولانا اسرارالحق قاسمی ؒ کا فون آیا اور کہا کہ مولانا معین الدین قاسمی ؒ میرے بہت اچھے ساتھی اور دوست تھے، دارالعلوم دیوبند کے ۔آخر میں حضرت کی مغفرت وبلندی درجات کی دعائوں کے ساتھ حضرت کے اہل خانہ وجملہ پسماندگان کیلئے صبرواستقامت کی دعاکی گی۔ اس نشست میں ادارہ کے طلبہ واساتذہ،وہ دیگر حضرات موجود تھے۔