• 425
    Shares

حیدر آباد :ایک طرف وزیر اعظم نریندر مودی نے افغانستان معاملہ پر اپنی خاموشی توڑتے ہوئے واضح لفظوں میں کہا ہے کہ ’’دہشت کے ذریعہ حکومت کھڑا کرنے والوں کا وجود مستقل نہیں‘‘، اور دوسری طرف اے آئی ایم آئی ایم سربراہ اسدالدین اویسی نے مرکزی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہہ دیا ہے کہ ’’یہاں خواتین پر مظالم ہوتے رہتے ہیں، اور ان کو افغانستان کی فکر ستا رہی ہے۔‘‘

دراصل افغانستان میں طالبان کے قبضے کے بعد وہاں کی خواتین اپنے حقوق کو لے کر اور اپنے اوپر ہونے والے مظالم کے اندیشہ سے ڈری ہوئی ہیں۔ ایسے ماحول میں ہندوستان سمیت دنیا کے کئی ممالک نے افغانستان کی حالت پر اپنی فکر کا اظہار کیا ہے۔

مرکزی حکومت کے کچھ وزراء اور بی جے پی کے سرکردہ لیڈروں نے طالبان کے خلاف سخت بیانات بھی دیے ہیں، لیکن اسدالدین اویسی نے ہندوستانی خواتین پر ہو رہے مظالم کو لے کر مودی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

اسدالدین اویسی نے حیدر آباد میں دیے گئے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ہندوستان میں تقریباً 10 فیصد لڑکیوں کی موت پانچ سال سے کم عمر میں ہو جاتی ہے، لیکن فکر افغانستان کی ہو رہی ہے۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’’ہندوستان میں خواتین کے خلاف بے حساب ظلم ہوتے ہیں، لیکن مرکز کو فکر افغانستانی خواتین کی ہے۔‘‘

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔