ممبئی میں خسرہ سے 13 بچے ہلاک

523

ممبئی: 28/نومبر(ایجنسیز)کووڈ کی وجہ سے دنیا بھر میں خسرہ کی بیماری ایک بڑے خطرے کے طور پر ابھری ہے۔ افسوسناک بات یہ ہے کہ پوری دنیا میں صرف چھوٹے بچے ہی اس وائرس سے متاثر ہو رہے ہیں۔ ملک کی مالیاتی راجدھانی ممبئی میں خسرہ سے بچوں کی بڑی تعداد متاثر ہو رہی ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق صرف ممبئی میں 200 بچے خسرہ سے متاثر ہوئے ہیں جبکہ 13 بچے جاں بحق ہو چکے ہیں۔ دنیا کے سائنسدان اور ڈاکٹر اس وائرس کے پھیلاؤ پر نظر رکھے ہوئے ہیں۔

خاص بات یہ ہے کہ یہ وائرس صرف چھوٹے بچوں کو زیادہ متاثر کر رہا ہے۔ممبئی میں خسرہ کی وبا پھیلنے سے سبھی والدین پریشان ہیں۔ دوسری ریاستوں میں بھی لوگ اپنے عزیزوں کے بارے میں تشویش کا اظہار کر رہے ہیں۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ 5 سال سے کم عمر کے بچے اس وائرس کا زیادہ شکار ہو سکتے ہیں۔ 2 سال کے بچے کو زیادہ خطرہ ہوتا ہے۔ ان بچوں کو الگ تھلگ کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ بیماری ایک شخص سے دوسرے میں بہت تیزی سے پھیلتی ہے۔زیادہ تر وائرس سے حفاظت کا واحد طریقہ ویکسین کو سمجھا جاتا ہے۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اب تک کی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ کوئی بھی ویکسین کسی بھی بیماری سے 100 فیصد محفوظ نہیں رکھ سکتی۔ خسرہ کے ساتھ بھی ایسا ہی ہے۔

لیکن ایک بار جب ویکسین لگائی جائے گی تو بچے میں ہلکی علامات ظاہر ہوں گی۔ جن بچوں کو ویکسین نہیں لگائی گئی ہے۔ ان میں نمونیا، اسہال، سیپسس سنگین نوعیت کے ہوتے ہیں۔ ویکسین شدہ بچوں میں یہ علامات کم شدید ہوں گی اس لئے یہ ضروری ہے کہ تحفظ کے لیے خسرہ کے دونوں ٹیکے لگوائے جائیں۔وائرس کے سامنے آنے کے بعد علامات ظاہر ہونے میں دس دن لگتے ہیں۔ کچھ عام ابتدائی علامات میں کھانسی، نزلہ، ناک بہنا، گلے میں خراش، بھوک میں کمی، تیز بخار اور جسم میں درد شامل ہیں۔ پانچ دن کے بعد، دھبے نمودار ہوتے ہیں، جو دھبے والے سرخ نشانات کی طرح نظر آتے ہیں۔

یہ عام طور پر بچے کے کان کے پیچھے شروع ہوتے ہیں۔ بعد میں دوسرے حصوں میں پھیل گیا۔ بعض صورتوں میں، منہ کے اوپری حصے پر سفید نشانات دیکھے جا سکتے ہیں۔ضرورت اس بات کی ہے کہ انتظامیہ متاثرہ بچوں کو تلاش کرے اور جلد از جلد ان کا علاج شروع کرے۔ والدین یا رشتہ دار بچے کو باہر نہ لے جائیں۔ مشتبہ مریض کی صورت میں بچے کو الگ تھلگ کریں۔ اگر ویکسینیشن نہیں کروائی گئی ہے تو فوراً ٹیکہ لگائیں۔ اگر کسی کو بھی کو کوئی پریشانی محسوس ہوتی ہے تو فوری طور پر ڈاکٹر سے ملیں۔