مغربی بنگال کا نام بدل کر ’بنگلہ‘رکھنے سے مرکزکا انکار

0 18

نئی دہلی/ کولکاتہ، 14 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مرکز کی مودی حکومت نے مغربی بنگال کا نام بدل کر ‘بنگلہ ‘ رکھنے کی ریاستی حکومت کی تجویز کو مسترد کردی ہے ۔ وزارت داخلہ کے ذرائع نے بتایا کہ مرکزی حکومت نے اس اعتراض کے ساتھ ریاستی حکومت کی تجویز کو واپس بھیج دیا ہے کہ ریاست کے مجوزہ نام اور پڑوسی ملک بنگلہ دیش کے نام میں مماثلت ہورہی ہے ۔ ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ بی جے پی کی ریاستی یونٹ مغربی بنگال کا نام ‘پشچم بنگا’ رکھنے کے حق میں ہے ۔ یادرہے کہ ممتا بنرجی کی حکومت نے اس سے پہلے 2011 ، 2016 اور امسال تین مواقع پر ریاست کا نام بدلنے کی تجویز بھیجی ہے ۔ پہلی بار ریاستی حکومت کی طرف سے مغربی بنگال کا نام’ پشچم بنگا’ رکھنے کی تجویز کو یوپی اے حکومت نے 2011 میں مسترد کردیا تھا۔ جبکہ 2016 میں مودی حکومت نے ریاست کا نام انگریزی، بنگالی اور ہندی زبان میں بالترتیب بینگال، بنگلہ اور بنگال رکھنے کی تجویز ٹھکرا دی تھی۔ بی جے پی کی ریاستی یونٹ کے صدر دلیپ گھوش کا کہنا ہے کہ مغربی بنگال کا نام اگر بدلنا ہے ، تو اسے صرف ‘پشجم بنگا’ ہی کیا جانا چاہئے ، بصورت دیگر اس سے غیر ضروری کنفیوژن پیدا ہوگی اور دوسرے نام سے پڑوسی ملک بنگلہ دیش کے ساتھ مشابہت لازم آئے گی۔