ناندیڑ: 23جنوری۔ (ورق تازہ نیوز)”ملک کی موجودہ صورت اورہماری ذمہ داریاں“عنوان کے تحت آج ناندیڑ میں وحد ت اسلامی ہند کے معتمد عمومی جناب ضیاءالدین صدیقی کی موجودگی میں شہر کے معزز افراد کی ایک نشست کاانعقاد دپہر کے وقت آر کے فنکشن ہال میں کیاگیا ۔

جس کے بعد تین بجے دوپہر ایک پریس کانفرنس کااہتمام کیاگیا۔ ضیاءالدین صدیقی نے کہاکہ آج کے دور میں مسلمانوں کا تحفظ اور انکی تہذیب سب سے اہم مسئلہ ہے ۔

ملک میں مسلمان عدم تحفظ کاشکار ہوگیاہے کیونکہ فرقہ پرست عناصر کسی نہ کسی بہانے مسلمانوںکوموت کے گھاٹ اتارہے ہیں اب تو مسلم خواتین کو بھی بدنام کرنے کیلئے سوشل میڈیا پلیٹ فارم کااستعمال کیاجارہاہے۔

انھوں نے مسلم خواتین اور لڑکیوں سے خصوصی طور پر گزارش کی کہ وہ سوشل میڈیا پلیٹ فارمس پراپنی گھریلو تصاویر کوشیئر نہ کریں ۔اگرایک بار یہ تصاویر کسی بھی سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر شیئر ہوجاتی ہیںتو فرقہ پرست عناصر اسکا غلط کاموںکیلئے استعمال کررہے ہیں۔

جبکہ دھرم سنسدمیں کھلے عام مسلمانوں کی نسل کشی کی باتیں کہی جارہی ہیں ۔ جس پر حکومت و قت کوئی کاروائی نہیں کررہی ہے بلکہ انھیں کھلی چھوٹ دی جارہی جس سے انکے حوصلے بلندہورہے ہیں ۔دوسری جانب ہماری تہذیب کو بھی ختم کرنے کی پوری طرح سے کوششیں کی جارہی ہیں ۔ایسے حالات میں مسلمانوں کو ایک پلیٹ فارم پرمتحدہونے کی ضرورت ہے۔ مسلکی مسائل کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ہمیں متحد ہو کر تحفظ اور تہذیب کی حفاظت کرنے کی ضرورت ہے۔

جناب ضیاءالدین نے سوال کے جواب میں کہا کہ ملک گیر سطح پرتمام مسلک کے ذمہ داران کومتحد کرنے کی کوشش کی جارہی ہے اور آئندہ دنوں میںایک اجلاس بھی منعقد کیاجانے والا ہے ۔انھوںنے کہاکہ فرقہ پرست عناصر ملک کو خانہ جنگی کی طرف ڈھکیل رہے ہیں جوملک کیلئے خطرے کی گھنٹی ہے۔ اس پریس کانفرنس میں ایڈوکیٹ نصیر فاروقی‘ ناصر خطیب کے علاوہ دیگر ذمہ داران بھی موجود تھے۔