”مسجدکی جگہ مندر منظور نہیں“ :آل انڈیا امامس کونسل

0 7

مسلم متحدہ محاذ کے احتجاجی دھرنے کو تائید

ناندیڑ : 4 دسمبر (ورقِ تازہ نیوز ) :۔ مسلم متحدہ محاذ کی جانب سے 6 دسمبر 2018 کو ناندیڑ ضلع کلکٹر آفس کے روبرو ایک پروقار احتجاجی دھرنا منظم کیا جا رہا ہے۔ آل انڈیا امامس کونسل مذکورہ دھرنے کی پر زور تائید کرتی ہے اسطرح کا صحافتی بیان مفتی محمد اسلم سبیلی جنرل سکریٹری ، امامس کونسل ناندیڑ نے دیا ۔ تفصیلات کے مطابق 6 دسمبر 1992 کو فرقہ پرست عناصر نے بڑی بے رحمی سے بابری مسجد کو شہید کر دیا ۔ جس کے بعد وطن ِ عزیز میں فرقہ وارانہ فسادات پھوٹ پڑے۔ ہندو مسلم کے درمیان نفرت کی فضاءپھیل گئی جو آج تک قائم ہے۔ فرقہ پرستوں نے قانون کو اپنے ہاتھوں میں لے کر جس طریقہ سے مسجد کو شہید کیا ۔ اس سے ہندوستان کا سر دنیا کے سامنے شرم سے جھک گیا۔ مزید یہ کے شہادت کے 26 برس بعد بھی انصاف نہیں ہوا۔ لہٰذا امامس کونسل ملک بھر میں ” مسجد کی جگہ مندر منظور نہیں “ کے عنوان سے مہم چلا رہی ہے۔ جس کے ذریعہ حکومت ِ ہند سے یہ مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ بابری مسجد کو دوبارہ اسی مقام پر تعمیر کیا جائے۔ اور مجرموں کو جلد از جلد سخت سے سخت سزاد ی جائے۔ اسی مطالبہ کو لے کر شہر ِ ناندیڑ میں مسلم متحدہ محاذ کی جانب سے جو احتجاجی دھرنا 6 دسمبر کو منعقد کیا جا رہا ہے۔ اس کی آل انڈیا امامس کونسل بھر پور تائید کر تی ہے اور تمام شہریان ِ ناندیڑ کی عوام سے یہ اپیل کرتی ہے کہ مذکورہ دھرنے میں کثیر تعداد میں شرکت کریں۔