مدینہ منورہ کے آسمان پر چھانے والے سبز بادلوں کی حقیقت کیا ہے؟ جانیے

1,271

مدینہ منورہ کے آسمان پر سبز بادل کا ٹکڑا چھا گیا، اس منظر نے دیکھنے والوں کو حیران کر دیا، سبز بادل کی تصاویر بڑے پیمانے پر ذرائع ابلاغ میں نشر کی جا رہی ہیں اور سوشل میڈیا پر بھی ان تصاویر کو بڑے پیمانے پر شیئر کیا گیا۔ایک موسمیاتی تجزیہ کار اور محقق معاذ الاحمدی نے صورتحال کی وضاحت کی اور بتایا کہ سبز بادل در اصل شدید بارش برسانے والا بادل ہوتا ہے۔ یہ بادل نشاندہی کرتا ہے کہ اس علاقے میں شدید بارش ہو سکتی ہے۔

انہوں نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو انٹرویو میں کہا کہ بادل بہت زیادہ تھے اور ٹروپوز کی تہہ میں داخل ہو گئے تھے ۔ سبز بادل ایک سپر سیل قسم کا ہوتا ہے جو کہ ژالہ باری کے ساتھ بارش کی وافر مقدار کی نشاندہی کرتا ہے۔ سورج کی شعاعیں برف کے کرسٹل میں داخل ہوتی ہیں تو وہ سبز ہو جاتے ہیں۔

انہوں نے مزید بتایا وہ نیلے اور سبز رنگ بہت مضبوط اعداد وشمار والی صورتحال کو ظاہر کرتے ہیں، اس صورتحال میں نمی کی بڑی مقدار 700 ہیکٹو پاسکل، اوپری کرنٹ میں ریفریکشن 500 ہیکٹو پاسکل اور ٹھنڈک 500 ہیکٹو پاسکل تک پہنچ جاتی ہے۔ سیٹلائٹ کے ذریعے یہ واضح ہوتا ہے کہ بادل ایک حد یعنی 18 کلومیٹر بلندی تک پہنچ چکے ہیں جو ٹراپوسفیئر کی تہہ تک پہنچ سکتے ہیں۔

معاذ الاحمدی نے کہا سعودی عرب کے بہت سے علاقوں میں فضائی صورتحال عدم استحکام کا شکار ہے۔ یہ ایک فضائی دباؤ تھا جس نے شمال کے علاقوں کو متاثر کیا ہے۔ ایک سرد محاذ ایک گرم محاذ سے ٹکرا گیا ہے۔

منگل کی صبح سے موسمی حالات خراب تھے۔ تبوک، طریف، بحیرہ احمر کے ساحلوں، الوجہ، املج، ینبع، مشرقی علاقوں العیص، القری میں گرج چمک کے ساتھ موسلا دھار بارش کی پیش گوئی ہے۔ مدینہ منورہ اور الرایس اور جدہ تک میں بارش کا امکان ہے۔