متنازعہ بیان کے بعد ناندیڑمیں گورنر کاعلامتی پتلہ نذرآتش

266

ناندیڑ:30 جولائی۔( ورق تازہ نیوز) متنازعہ بیانات دے کر ہمیشہ تنازعات کی زد میں رہنے والے ریاستی گورنر بھگت سنگھ کوشیاری نے ایک بار پھر متنازعہ بیان دیا ہے۔ ریاست سے گجراتی اور راجستھانی چلے گئے تو ممبئی مالی دارالحکومت نہیں رہے گا، انھوں نے ایک بار پھر ایسا بیان دے کر نیا تنازعہ کھڑا کر دیا ہے۔ ریاست میں اپوزیشن پارٹی سمیت شہریوں نے اس بیان کی مذمت کی ہے۔ ہفتہ کی سہ پہر ناندیڑ میں این سی پی یوتھ کانگریس کی جانب سے گورنر کوشیاری کا علامتی پتلا جلایا گیا۔

آیا ریاست کے گورنر بھگت سنگھ کوشیاری ہمیشہ سے متنازعہ رہے ہیں۔ بیان زیر بحث ہے۔ انہوں نے ایک بار پھر متنازعہ بیان دیا ہے۔ بھگت سنگھ کوشیاری نے کہا ہے کہ اگر گجراتی اور راجستھانی چلے جائیں تو ممبئی میں پیسہ نہیں بچے گا اور ممبئی مالی دارالحکومت نہیں رہے گا۔ وہ ممبئی کے اندھیری ویسٹ میں ایک مقامی تقریب سے خطاب کررہے تھے۔

اس واقعہ کا اثر ناندیڑ میں بھی محسوس ہوا ہے، ہفتہ (30جولائی) دوپہر کو نیشنلسٹ یوتھ کانگریس کی جانب سے شہر کے آئی ٹی آئی چوک پر گورنر کے علامتی مجسمے کو نذر آتش کیاگیا۔کارکنوں نے گورنر بھگت سنگھ کوشیاری کے خلاف نعرے لگائے۔ اس موقع پر این سی پی یوتھ کانگریس کے عہدیداروں کی بڑی تعداد موجود تھی۔