مبنیہ لو جہاد کے معاملے میں آرزو ملک کے گھر پر انتظامیہ نے بلڈوزر چلایا

665

ماراپھاری(ایجنسیز)ملزمین کے خلاف کارروائی کے نام پر بلڈوزر چلانے کا عمل اتر پردیش، مدھیہ پردیش اور آسام کے بعد جھارکھنڈ میں بھی انجام دیا گیا ہے۔ جھارکھنڈ کے بوکارو میں مبینہ لو جہاد کے ملزم آرزو ملک کے گھر پر انتظامیہ نے بلڈوزر چلا کر اسے زمیں دوز کر دیا ہے۔ الزام ہے کہ آرزو نے اپنا مذہب چھپا کر ہندو لڑکی سے شادی کی، اور پھر لڑکی کو اپنے دوستوں کے حوالے کر دیا، جنھوں نے اجتماعی عصمت دری کا واقعہ انجام دیا۔ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ ملزم نے لڑکی کی ویڈیو بھی بنائی جسے دکھا کر وہ لڑکی کو بلیک میل کرتا تھا۔

انتظامیہ نے ملزم کے ماراپھاری تھانہ حلقہ کے آزاد نگر واقع گھر پر بلڈوزر چلایا گیا ہے۔ متاثرہ نے اس معاملے میں پانچ لوگوں کے خلاف معاملہ درج کرایا ہے۔ واقعہ کے بعد سے ہی ملزم فرار ہیں۔ جانکاری کے مطابق فرار ملزم آرزو ملک کے گھر کی پہلے ہی کورٹ کے حکم کے بعد قرقی ضبطی ہو چکی ہے۔ اسی معاملے میں چاس ڈویژنل افسر کے کورٹ میں تجاوزات کی عرضی کے تحت اس کے گھر پر پولیس اور مجسٹریٹ کی موجودگی میں بلڈوزر چلایا گیا۔ اس دوران پولیس کی کثیر مقدار میں تعیناتی کی گئی تھی۔

قابل ذکر ہے کہ ملزم آرزو ملک کے خلاف چاس مہیلا تھانہ میں متاثرہ لڑکی نے کیس درج کرویا تھا جس میں متاثرہ لڑکی کے ذریعہ الزام عائد کیا گیا ہے کہ 2021 میں جب وہ گریجویشن کر رہی تھی تو اس کی ملاقات آرزو سے ہوئی۔

دونوں کے درمیان معاشقہ شروع ہو گیا۔ ایک دن وہ اسے کسی بہانے اپنے ساتھ کوآپریٹو کالونی کے ایک مکان میں لے گیا، جہاں پہلے ہی پنڈت بلا کر رکھا گیا تھا۔ پنڈت کے سامنے اس نے لڑکی کی مانگ بھر کر جبراً شادی کر لی اور اس کی ویڈیو بھی بنائی۔ اس کے بعد بلیک میل کر کے لڑکی کو اپنے ساتھیوں کے حوالے کر دیا۔

الزام ہے کہ انھوں نے لڑکی کی اجتماعی عصمت دری کی اور ویڈیو بنا کر اسے بلیک میلنگ کرتے رہے۔ اس بلیک میلنگ سے پریشان ہو کر بالآخر لڑکی نے مہیلا تھانہ میں ایف آئی آر درج کرائی۔