اورنگ آباد : لاک ڈاؤن میں ملازمت گئی تو گوشت کے کاروباری بنے دو غیر مسلم انجینئر : دو سال بعد کمپنی کو دس کروڑ میں فروخت کیا

712

اورنگ آباد:24 جولائی ( ورق تازہ نیوز) کورونا کی تباہی کا سامنا کرنے کے بعد ملک بھر میں نافذ لاک ڈاؤن سے لاکھوں لوگوں کی روزی روٹی بحران میں آگئی۔ تمام لوگوں کا کیرئیر داؤ پر لگا ہوا تھا۔ اسی دوران دو بچپن کے دوست آکاش مہاسکے اور آدتیہ کیرتنے کا کیرئیر بھی مشکلات کا شکار تھا۔آکاش اور آدتیہ ایک کمپنی میں انجینئر کے طور پر کام کر رہے تھے کہ کووڈ وبائی مرض نے ان کی زندگی کا رخ بدل دیا۔ two engineer friends started meat business

انھوں نے لاک ڈاؤن کا پہلا مہینہ فلمیں دیکھنے میں گزارا تھا، لیکن لاک ڈاؤن کی صورتحال جاری رہنے کی وجہ سے وہ ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ اورنگ آباد کے آس پاس بہت سےصنعتی یونٹس ہیں اور دونوں کسی اور کمپنی میں اپنی قسمت آزما سکتے تھے لیکن انہوں نے نوکریوں کے لیے درخواست دینے کے بجائے اپنا کاروبار شروع کرنے کا فیصلہ کیا۔

کامیاب بزنس مین بننے کے بارے میں کچھ کتابیں پڑھنے کے بعد انھوں نے اس سمت میں اپنے ارادے کا یقین کر لیا لیکن وہ سوچ نہیں پا رہا تھے کہ کیا کرے۔ اس کا آغاز مقامی یونیورسٹی میں گوشت اور پولٹری پروسیسنگ کے پیشہ ورانہ تربیتی کورس سے ہوا۔ انھوں نے غیر منظم گوشت کی منڈی میں داخل ہونے کا ارادہ کیا۔

ابتدائی طور پر دونوں ہی تھے۔انہیں اپنے گھر والوں کی طرف سے بھی مکمل تعاون نہیں ملا۔ آدتیہ نے کہا، ہمارے گھر والوں کو لگا کہ ہم جس طرح کا کام کر رہے ہیں، اس میں کوئی بھی اپنی لڑکی سے شادی نہیں کرنا چاہے گا، لیکن بعد میں ہمارے خاندان والے ایک ساتھ کھڑے ہو گئے۔

انھوں نے اپنے دوستوں کی مدد سے 100 مربع فٹ کے رقبے میں جمع کردہ 25,000 روپے کے فنڈ سے ایپٹیٹی نامی کمپنی شروع کی۔ اس کا ایک ماہ کا کاروبار اب چار لاکھ روپے ماہانہ سے تجاوز کر چکا ہے۔ ان دونوں (گوشت کے تاجر) کا کاروبار آہستہ آہستہ بڑھنے لگا۔

دریں اثنا، شہر میں ایک کمپنی، Fabiکارپوریشن کی نظر ان پر پڑی۔ فیبی نے حال ہی میں اپیٹیٹ میں 10 کروڑ روپے میں ایک بڑا حصہ خریدا ہے۔ تاہم، آدتیہ اور آکاش اب بھی اس کے ساتھ کچھ حصہ داری کے ساتھ کمپنی سے منسلک رہیں گے۔

فیبی کے ڈائریکٹر فہد سید نے کہا کہ ایپٹیٹی برانڈ معاہدے کے بعد بھی جاری رہے گا اور اس کے بینر تلے نئی مصنوعات لانچ کی جائیں گی۔