رانچی: غیر منقسم بہار کے مشہور چارہ گھوٹالہ معاملے میں دسمبر 2017 میں جیل بھیجے گئے آرجے ڈی سپریمو لالو پرساد آخر کار سوا تین سال بعد رہا ہوگئے۔ ان کی رہائی کے آرڈر جمعرات کو ہی دہلی ایمس بھیج دیئے گئے تھے، جہاں ان کا علاج چل رہا ہے۔ اب ایمس کو رہائی کے آرڈر کی ہارڈ کاپی بھی مل گئی ہے۔ اب لالو پرساد قید سے آزاد ہیں، لیکن اہل خانہ نے انہیں فی الحال ایمس میں ہی رکھنے کا فیصلہ لیا ہے۔ کیونکہ ان کی طبیعت خراب ہے۔ مسلسل ڈاکٹروں کی دیکھ بھال کی ضرورت ہے۔ آگے ڈاکٹروں کی صلاح پر ہی انہیں اسپتال سے باہر لایا جائے گا۔

لالو پرساد کے رہا ہونے کے بعد انہیں راجیہ سبھا رکن پارلیمنٹ بیٹی میسا بھارتی کی دہلی واقع سرکاری رہائش پر رکھنے کا انتظام مکمل کر لیا گیا ہے۔ ایمس میں 25 جنوری سے لالو کا علاج چل رہا ہے۔ اہل خانہ نے بتایا کہ ابھی آر جے ڈی سپریمو کو پٹنہ نہیں بھیجا جائے گا۔ ان کی طبیعت مسلسل خراب رہی ہے اور کورونا کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے کوئی خطرہ نہیں اٹھایا جاسکتا ہے۔

اہل خانہ کا کہنا ہے کہ دہلی میں طبی نظام بہتر ہے۔ لالو یادو کو ڈاکٹر کی دیکھ ۔ ریکھ میں رہنا ہے۔ ایسے میں دہلی ہی ان کے لئے بہتر ہے۔ ڈاکٹروں کی صلاح کے مطابق ہی اہل خانہ فیصلہ کریں گے۔ ڈاکٹروں کی منظوری کے بعد ہی لالو یادو کو گھر لے جایا جائے گا۔