قادیانیت کی خفیہ سازشوں کے خلاف علمائے کرام کو میدان میں اترنے کی ضرورت:مجلس احرار اسلام بہار

224

کشن گنج 24؍ اگست (پریس ریلیز) ادارہ مکیہ کشن گنج میں مجلس احرار اسلام صوبہ بہار کی اہم میٹنگ کا انعقاد عمل میں آیاجس میں مجلس احرار اسلام کے صوبائی صدر مولانا الیاس مخلص نے قادیانیت کی خفیہ سازشوں کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پورے ملک میں علمائے کرام کو ’’تحفظ ختم نبوت‘‘ کے لیے میدانی سطح پر کام کرنے کی ضرورت ہے،

انہوں نے کہا کہ ایسی جگہوں پر جہاں مسلمان دینی اور مالی اعتبار سے کمزور ہیں ، وہاں قادیانیت کی خفیہ تبلیغ اور گمراہی کا کام جاری رہتا ہے، ایسے علاقوں کی پہچان کرکے علمائے کرام کو وہاں پہنچ کر مسلمانوں کو صحیح عقائد سے روشناس کرانے کی ضرورت ہے۔ مولانا آفتاب اظہرؔ صدیقی جنرل سکریٹری مجلس احرار اسلام صوبہ بہار نے بتایا کہ

مولانا ابوالکلام سپولوی کی خبر کے مطابق سوپول ضلع کے کچھ دیہی علاقوں میں قادیانیت خفیہ طور اپنا پیر پسار رہی ہے، لہذا مجلس احرار بہار ضلع سوپول کے ان سبھی علاقوں کا جائزہ لے رہی ہے اور بہت جلد سوپول ضلع میں ’’تحفظ ختم نبوت‘‘ تحریک کے تحت جگہ جگہ پر بیداری مہم چلائی جائے گی۔

مولانا شمیم ریاض ندوی محرک مجلس علمائے ملت و صوبائی ترجمان مجلس احرار اسلام نے کہا کہ عقیدۂ ختم نبوت ایمان کا لازمی جزء ہے، اس میں ذرہ برابر بھی کمی ہوگی تو ایمان غارت ہوجائے گا، قادیانیت کے ایجنڈے پر کام کرنے والے لوگ بھولو بھالے مسلمانوں

کو روپیے پیسے کا لالچ دے کر اور دین کے بارے میں غلط تشریحات پیش کرکے گمراہ بنانے کا کام کرتے ہیں ، ان کے پروپیگنڈوں کو زیادہ سے زیادہ عوامی سطح پر اجاگر کرنے کی ضرورت ہے۔ اس موقع پر مولانا توحید ، مولانا عبدالواحد بخاری اور قاری انظر جمال بھی موجود رہے۔