تھانے (آفتاب شیخ) ممبرا کے غیر کنٹونمنٹ زون علاقوں گرین زون کے زمرے میں آنے والی مساجد میں رمضان کے موقع پر نماز فرض باجماعت اور تراویح ادا کرنے کی اجازت دی جائے۔ اس طرح کا مطالبہ ممبرا کے تمام اہلسنت والجماعت کی مساجد، مدارس، و تنظیموں کی مشترکہ تنظیم ’جماعت اہلسنت‘ کی جانب سے کابینی و زیر و ممبرا کے ایم ایل اے ڈاکٹر جتیندر اوہاڈ کے ذریعہ حکومت مہاراشٹر سے کیا گیا ہے۔

رمضان میں فرض و تراویح کی اجازت تو دے دی جائے۔ اس مسئلہ کو لیکر ممبرا میں مسلک اہلسنت کے تمام مساجد، مدارس و تنظیموں پر مبنی مشترکہ تنظیم ’جماعت اہلسنت‘ کے ایک وفد نے معین المشائخ حضرت مولانا سید معین الدین اشرف (معین میاں) کے حکم پر مقامی ایم ایل اے و کابینی وزیر ڈاکٹر جتیندر اوہاڈ سے انکی رہائش گاہ پر ملاقات کی اور انھیں میمورنڈم پیش کر مطالبہ کیا کہ وہ اس سلسلہ میں شردپوار و سی ایم اودھو ٹھاکرے کے سامنے بات رکھیں کہ کم از کم ممبرا میں جن علاقوں میں کیس نہیں ہیں یا کم ہیں وہاں کی مساجد میں فرض نماز کی جماعت کی اور تراویح کی اجازت دیں۔ میمورنڈم میں بتایا گیا کہ اگرچہ کسی علاقہ میں اس کے مریض ملتے ہیں تو وہ اس پر سختی سے کام کریں اسے مکمل سیل کردیں لیکن اسی کی بانسبت جن علاقوں میں کوئی کیس نہیں ملتا وہاں کے مساجد میں نماز پنجگانہ کی اجازت دی جائے۔ وفد کی باتیں سننے کے بعد کابینی وزیر ڈاکٹر جتیندر اوہاڈ نے کہا کہ آپ لوگوں کی تجویز اچھی ہے لیکن اس وقت مہاراشٹر کے حالات انتہائی سنگین چل رہے ہیں ایسے میں کسی بھی قسم کی اجازت مل پانا مشکل ہے انھوں نے کہا مہاراشٹر میں ممبرا ہی ایسا شہر ہے جہاں انتہائی کم کیسس آرہے ہیں تو یہ آپ سبھی علمائے کرام کی دعائیں ہیں میں یہی چاہونگا کہ آپ لوگ مزید دعائیں کریں کہ پوری ریاست سے یہ سلسلہ جلد تھم جائے جتیندر اوہاڈ نے کہا اگرچہ ہم اس متعلق اجازت دیتے ہیں اور خدا نخواستہ کوئی ایک مریض آپ کی صفوں میں یا مسجد میں پہنچ کر سبھی کو متاثر کردیتا ہے تو اسکا ذمہ دار و گنہگار کون ہوگا۔ اس لئے میری درخواست ہے کہ آپ لوگ عوام سے اپیل کریں کہ وہ گھروں میں عبادت کریں اور باہر نکلنے سے گریز کریں جتنا ممکن ہوسکے احتیاط برتیں ہمیں امید ہے کہ ر مضان کی برکت سے جلد ہی یہ بیماری ختم ہوجائے گی۔ اوہاڈ نے وفد میں شامل علمائے کرام سے کہا کہ آپ لوگ مساجد میں لاک ڈاون اور گائیڈ لائن کے مطابق امام، موذن، خادم و ایکاد اور اسطرح سے 4 تا 5 لوگوں کے ساتھ نماز پنجگانہ کی جماعت جاری رکھوں لیکن بھیڑ نہ کرو رمضان کو ابھی تھوڑا وقت ہے ممکن ہے کہ اوپر والا رحم کردے اور جیسے ہی کیس کم ہوگا عبادت گاہیں کھل جائیں گی۔ اس وفد میں شامل مولانا قاری عطاءاللہ قادری (خطیب و امام سنی جامع مسجد، ممبرا) نے کہا کہ جماعت اہلسنت کی جانب سے ایک کوشش کی اور ایک تجویز وزیر موصوف کو پیش کی گئی ہے اور ہمارا کام ہے کوشش کرنا اس میں کامیابی دینا اللہ کی مرضی ہے آگے دیکھتے ہیں کیا ہوگا۔ اس

طرح سینئر سماجی و سیاسی رہنما سید علی اشرف نے بتایا کہ آج ممبرا سے جماعت اہلسنت کا ایک وفد کابینی وزیر کے پاس گیا تھاوفد نے ایک اچھی تجویز اپنی جانب سے پیش کی لیکن جتندر اوہاڈ بھی کیا کرسکتے ہیں اس وقت حالات بد سے بدتر ہوتے جارہے ہیں سبھی کو سنبھل کر رہنا ہے احتیاط برتنا ہے۔ اس طرح اس وفد میں قاری عطاءاللہ ( خطیب و امام سنی جامع مسجد ممبرا )، مولانا محفوظ الرحمن علیمی (خطیب و امام اشرفیہ مسجد رشید کمپاونڈ)، مولانا سجاد امجدی (خطیب و امام فاطمہ مسجد جبلی پارک)، مولانا جمال احمد صدیقی (ناظم اعلیٰ

دارالعلوم مخدوم سمنانی شیل پھاٹا)، مولانا الطاف لطیفی و مولانا نسیم فریدی (دارالعلوم غریب نواز اشرفیہ ممبرا)، صلاح الدین شیخ اشرفی (ٹرسٹی غوثیہ مسجد شملہ پارک کوسہ)، شیخ رفیق (ٹرسٹی سنی نوری جامع مسجد قادر پیلس کوسہ)، مولانا ساجد صاحب (خطیب و امام قادری مخدو م سمنانی کھرڈی روڈ)، محمد نعیم رضوی (رضا اکیڈمی)، پروفیسر عبد اللہ علوی(اسلامک اسکالر)، مولانا ہدایت اللہ، مولانا شیر خان صاحب، بلڈر و سماجی کارکن جمال احمد خان ویگر موجود تھے۔