• 425
    Shares

بغداد : عراق نے امریکی حکومت کے ساتھ مل کرملک میں کئی اڈوں میں فوجی دستوں کوکم کرنے کے لیے ایک معاہدے کا اعلان کردیا۔ خبررساں اداروں کے مطابق بغداد میں امریکی اور عراقی حکام پر مشتمل اعلیٰ سطح کا سیکورٹی اجلاس منعقد ہوا۔ اس اجلاس میں طے پایا کہ عراق کی تجویز پر ملک میں اربیل اور عین الاسد فوجی اڈوں پر تعینات امریکی اور اتحادی فوج کی تعداد کم کی جائے گی۔ اجلاس کے بعد عراقی جوائنٹ آپریشنزکمانڈ کا کہنا تھا کہ رواں ماہ کے دوران انبار میں واقع عین الاسد اور اربیل میں قائم فوجی اڈوں سے امریکی فوج کی تعداد کم کی جائے گی۔ ان دونوں فوجی اڈوں سے نفری کی تعداد کم کرنے کا فیصلہ ایک ایسے وقت میں کیا گیا ہے ، جب دونوں اڈے گزشتہ کچھ عرصے سے عراقی ملیشیاؤں کے حملوں کا نشانہ بن چکے ہیں۔ عراقی سرکاری خبر رساں ایجنسی ا?ئی این اے کی رپورٹ کے مطابق عراق میں فوجی اڈوں سے امریکی فوج کی تعداد میں کمی کا یہ معاہدہ وزیر اعظم مصطفی کاظمی کی نگرانی میں امریکا اور عراق کے اسٹریٹجک ڈائیلاگ کے آغاز سے ایک مہینہ پہلے طے پایا گیا ہے۔ یہ پیش رفت ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب دوسری طرف عراق میں امریکی فوجی تنصیبات، فوجی اڈوں اور سفارتی مرکز کو نامعلوم عناصر کی طرف سے حملوں کا سامنا ہے۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔ 


اپنی رائے یہاں لکھیں