عدالت کا فیصلہ کچھ بھی آئے, بابری مسجد وہیں بنے گی بھیم سینا صدر کا متنازعہ بیان

0 38

کانپور: 2019 انتخابات کے قریب آتے ہی رام مندر کا مسئلہ ایک بار پھر گرما گیا ہے. اس بار بھیم سینا چیف راجندر مان نے اس معاملے پر متنازعہ بیان دیا. کانپور میں مسلم اور دلت اتحاد اجلاس میں ایودھیا تنازعہ پر خطاب کرتے ہوئے بھیم سینا کے قومی صدر راجندر مان نے کہا، "بابری مسجد جہاں پر تھی وہیں بنائیں گے. کورٹ کا فیصلہ کچھ بھی ہو اس سے ہمیں کوئی مطلب نہیں ہے. جس طرح ہم نے ایس سی / ایس ٹی ایکٹ کو نہیں مانا تھا. اسی طرح ہم بابری کیس کو بھی نہیں مانیں گے. بابری مسجد جہاں تھی وہیں بنائیں گے یہ بھیم فوج مسلم تنظیموں کو یقین ہے. یہ بھیم سینا کا وعدہ ہے اور بھیم فوج جو وعدہ کرتی ہے اسے پورا کرتی ہے. بابری مسجد وہیں بنے گی چاہے کوئی کتنا بھی زور لگا لے. ”

کانپور میں مسلم اور دلت اتحاد اجلاس کا انعقاد کیا گیا. جس میں بہت سے مسلم تنظیموں اور معاشرتی اداروں نے حصہ لیا. راجندر مان نے بھی شرکت کی. اس موقع پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا، "پہلے بابری مسجد وہاں تھی سنی وقف بورڈ اور دیگر مسلم تنظیموں نے اپنے دستاویزات عدالت میں پیش کر دیئے تھے. وہ دستاویزات کورٹ کے میں ہے جب مسجد وہاں بنی تھی تو مسجد وہیں ہی بنے گی . قانون کے مطابق اور آئین کے مطابق. ہم سپریم کورٹ کا فیصلہ تب مانیں گے جب سپریم کورٹ وہاں مسجد بننے کا آرڈر کرے، ورنہ سپریم کورٹ کا فیصلہ ہم نہیں مانیں گے. سپریم کورٹ اگر حکومت کے دباؤ میں آکر کوئی فیصلہ کرتا ہے تو ہم اس کو نہیں مانیں گے، جس طرح ہم نے ایس سی / ایس ٹی ایکٹ میں نہیں مانا تھا. کیونکہ وہ ہمارا بنیادی حق ہے اس کو ہم نہیں چھوڑیں گے. "