عالمی عدالت فلسطینی زمینوں پر اسرائیلی قبضے پر رائے دے: جنرل اسمبلی کی قرارداد منظور : دیکھئے کس نے فلسطین کے حق میں ووٹ دیا اور کس نے اسرائیل کے

2,698

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں بھارت نے مشرقی یروشلم اور فلسطینی علاقوں پر اسرائیل کے قبضے سے متعلق قرارداد کے مسودے سے خود کو الگ کر لیا ہے۔قرارداد کے مسودے میں فلسطینی سرزمین پر اسرائیل کے "طویل قبضے” اور اس کی علیحدگی کے قانونی نتائج کے بارے میں عالمی عدالت انصاف سے رائے مانگی گئی ہے۔ قرارداد کا مسودہ یہ تھا – ‘اسرائیلی سرگرمیاں جو مشرقی یروشلم سمیت مقبوضہ فلسطینی علاقے میں فلسطینی عوام کے انسانی حقوق کو متاثر کرتی ہیں۔’

اس نے بین الاقوامی عدالت انصاف سے درخواست کی کہ "اسرائیل کی طرف سے فلسطینی سرزمین پر قبضے، آباد کاری اور حملے کے ذریعے 1967 سے فلسطینی عوام کے حق خودارادیت کی خلاف ورزی کے قانونی نتائج” کے بارے میں مشورہ دیا جائے۔

اس مسودے میں اسرائیل کے یروشلم کے آبادیاتی ڈھانچے، کردار اور حیثیت کو تبدیل کرنے کی کوشش کرنے اور امتیازی قوانین اپنانے کی بات بھی کی گئی ہے۔

اس تجویز کے حق میں 87 اور مخالفت میں 26 ووٹ پڑے۔ اور 53 ممالک نے ووٹنگ سے پرہیز کیا۔امریکا اور اسرائیل نے قرارداد کے مسودے کے خلاف ووٹ دیا جب کہ بھارت، برازیل، جاپان، میانمار اور فرانس نے ووٹ نہیں دیا۔

پورا تنازعہ کیا ہے

اسرائیل یروشلم کو اپنا غیر منقسم دارالحکومت مانتا ہے جبکہ فلسطینی مشرقی یروشلم کو اپنی مستقبل کی ریاست کا دارالحکومت سمجھتے ہیں۔ مشرقی یروشلم پر اسرائیل نے 1967 کی عرب اسرائیل جنگ میں قبضہ کر لیا تھا۔

شہر کے بیچوں بیچ ایک قدیم شہر ہے جسے پرانا شہر کہا جاتا ہے۔ یہ شہر بھی اسرائیل کے قبضے میں آگیا۔ بعد میں اسرائیل نے اس علاقے پر قبضہ کر لیا لیکن اسے بین الاقوامی سطح پر پذیرائی نہیں ملی۔

بیت المقدس کے مقدس شہر پر اسرائیلیوں اور فلسطینیوں کے درمیان تنازعہ بہت پرانا اور گہرا ہے۔ یہ شہر اسلام، یہودیت اور عیسائیت میں بہت اہم مقام رکھتا ہے۔یہ شہر جسے عبرانی میں یروشلم اور عربی میں القدس کہا جاتا ہے، دنیا کے قدیم ترین شہروں میں سے ایک ہے۔

یروشلم میں اسرائیلیوں، پولیس اور فلسطینیوں کے درمیان اکثر جھڑپیں ہوتی رہتی ہیں۔ اس جگہ کا شمار دنیا کے متنازع ترین مقامات میں ہوتا ہے۔

یروشلم پر اسرائیل کی مکمل خود مختاری کو کبھی تسلیم نہیں کیا گیا اور اسرائیلی رہنما اس کی مخالفت کا اظہار کرتے رہے ہیں۔

ووٹنگ سے قبل اقوام متحدہ میں اسرائیل کے سفیر گیلاد اردان نے قرارداد کے مسودے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اسے جانبدارانہ قرار دیا۔ انہوں نے اقوام متحدہ کو بھی کٹہرے میں کھڑا کیا۔گیلاد اردان نے کہا کہ عالمی عدالت انصاف کی رائے کے لیے ‘اشتعال انگیز تجویز’ لانا اقوام متحدہ اور اس کی حمایت کرنے والے ہر ملک پر ‘اخلاقی داغ’ ہے۔

انہوں نے کہا کہ کوئی بھی بین الاقوامی ادارہ یہ فیصلہ نہیں کر سکتا کہ آیا یہودیوں نے اپنے ہی وطن پر "قبضہ” کر رکھا ہے۔ اخلاقی طور پر دیوالیہ اور سیاست زدہ اقوام متحدہ کے حکم کے بعد عدالت کا کوئی بھی فیصلہ مکمل طور پر غیر قانونی ہوگا۔

گیلاد اردان نے کہا کہ شب برات پر اسرائیل کے خلاف ووٹ کا انعقاد اقوام متحدہ کے "اخلاقی گراوٹ” کی ایک اور مثال ہے۔ پہلے سے طے شدہ نتائج کے ساتھ یہ ووٹنگ اسرائیل کے فریق کو سننے سے روکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ستمبر 2021 میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اعلیٰ سطحی ہفتے میں فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس نے کہا تھا کہ اگر اسرائیل ایک سال کے اندر اندر 1967 کی پوزیشن پر واپس نہیں آیا تو وہ ‘دی سے رجوع کریں گے۔ ہیگ (انٹرنیشنل کورٹ آف جسٹس) کرے گی۔

الاقصیٰ

ووٹنگ کے بعد ورلڈ جیوش کانگریس کے صدر رونالڈ ایس۔ لوڈر نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ میں ووٹنگ اسرائیل کے خلاف جاری تعصب کی ایک مثال ہے۔ "ہم امریکہ سمیت 26 ممالک کی تعریف کرتے ہیں جنہوں نے اس شرمناک قرارداد کے خلاف ووٹ دیا۔ یہ قرارداد یہودی ریاست کو الگ تھلگ اور شیطانی بنانے کی کوشش کرتی ہے۔”

لوڈر نے کہا کہ ان مقدمات کو عالمی عدالت انصاف میں لے جانا اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان مذاکرات کی راہ میں ایک اور رکاوٹ ہے۔ یہ ووٹ اسرائیل پر متعصب کمیشن آف انکوائری کا براہ راست نتیجہ ہے۔ اس کمیشن سے وابستہ لوگوں نے یہود مخالف تبصرے کیے ہیں اور اسرائیل پر تنقید کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس خطے میں امن اسی وقت آسکتا ہے جب دونوں فریق براہ راست اس میں شامل ہوں۔ورلڈ جیوش کانگریس ایک بین الاقوامی تنظیم ہے جو 100 سے زیادہ ممالک میں حکومتوں، پارلیمانوں اور بین الاقوامی تنظیموں میں یہودی برادریوں کی نمائندگی کرتی ہے۔