طالبان نے کہا ہے کہ اگر ستمبر میں نیٹو افواج کے انخلا کی آخری تاریخ کے بعد افغانستان میں کسی بھی غیر ملکی فوج کے کوئی اہلکار یہاں رہ جائیں گے تو انھیں خطرہ ہو گا۔طالبان کی جانب سے یہ بیان ان اطلاعات کے بعد سامنے آیا ہے جن کے مطابق ایک ہزار امریکی فوجی سفارتی مشن اور کابل کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کی حفاظت کے لیے افغانستان میں رہ سکتے ہیں۔

افغانستان میں نیٹو کا 20 سال جاری رہنے والا فوجی مشن اب ختم ہو رہا ہے لیکن ملک میں تشدد میں بدستور اضافہ ہوتا جا رہا ہے جبکہ طالبان نے مزید علاقے اپنے قبضے میں بھی لے لیے ہیں۔

افغانستان کی فورسز تنہا سکیورٹی کا چارج سنبھالنے کی تیاری کر رہی ہیں لیکن کابل کے مستقبل کے بارے میں تشویش بڑھتی جا رہی ہے۔
قطر میں طالبان کے دفتر سے بات کرتے ہوئے ترجمان سہیل شاہین نے کہا ہے کہ انخلا کے مکمل ہونے کے بعد کوئی غیر ملکی افواج، جن میں فوجی کانٹریکٹر بھی شامل ہیں، ملک میں نہیں رہنے چاہیے۔

انھوں نے بی بی سی کو بتایا کہ ’اگر وہ دوحہ معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اپنی افواج کو پیچھے چھوڑتے ہیں تو اس صورت میں یہ ہماری قیادت کا فیصلہ ہو گا کہ ہم کس طرح آگے بڑھیں۔‘

’ہم اس پر ردعمل دیں گے اور حتمی فیصلہ ہماری قیادت کا ہو گا۔‘سہیل شاہین نے اس بات پر بھی زور دیا ہے کہ سفارت کاروں، غیر سرکاری تنظیموں اور دیگر غیر ملکیوں کو نشانہ نہیں بنایا جائے گا لہذا ملک میں کسی بھی حفاظتی فورس کی ضرورت نہیں۔

انھوں نے کہا کہ ’ہم غیر ملکی فوجی قوتوں کے خلاف ہیں لیکن سفارت کاروں، این جی اوز، سفارتخانے اور ان میں کام کرنے والے والوں کے خلاف نہیں کیونکہ ان کی ہمارے لوگوں کو ضرورت ہے۔ ہم ان کے لیے کوئی خطرہ نہیں بنیں گے۔‘

سہیل شاہین نے گذشتہ ہفتے افغانستان میں امریکہ کے سب سے بڑے فوجی اڈے بگرام ایئر بیس سے غیر ملکی فوجیوں کے انخلا کو ’تاریخی لمحے‘ کے طور پر بیان کیا۔

یاد رہے کہ امریکہ اور اس کے نیٹو اتحادیوں نے طالبان کے ساتھ ایک معاہدے کے تحت اس وعدے کے بدلے تمام فوجیں واپس بلانے پر اتفاق کیا ہے کہ طالبان اپنے زیر کنٹرول علاقوں میں القاعدہ یا کسی اور شدت پسند گروہ کو کارروائیاں نہیں کرنے دیں گے۔ایک افغان رکن پارلیمان نے کہا ہے کہ غیر ملکی فوجیوں کا انخلا غیر ذمہ داری کے ساتھ کیا جا رہا ہے۔

رکن پارلیمان رضوان مراد نے بی بی سی کو بتایا کہ حکومت مذاکرات اور جنگ بندی کے لیے تیار ہے اور طالبان کو اب یہ ثابت کرنا ہو گا کہ وہ امن کے پابند ہیں۔

سہیل شاہین نے اس سے بھی انکار کیا کہ ملک میں جاری حالیہ تشدد میں طالبان کا کوئی کردار ہے۔

انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ افغان فوجیوں کے لڑنے سے انکار کے بعد بہت سارے اضلاع ثالثی کے ذریعے طالبان کے کنٹرول میں آئے۔

واضح رہے کہ اتوار کے روز طالبان نے جنوبی صوبہ قندھار کے ایک اور علاقے پر قبضہ کر لیا ہے۔ عسکریت پسندوں کا کہنا ہے کہ اب وہ ملک کے تقریباً 400 اضلاع میں سے ایک چوتھائی حصہ کنٹرول کرتے ہیں۔

سہیل شاہین نے یہ بھی بتایا کہ طالبان اور افغان حکومت کے مابین جاری مذاکرات میں ابھی تک انتخابات کا معاملہ زیر بحث نہیں آیا۔

یاد رہے کہ اکتوبر سنہ 2001 میں امریکی فورسز نے طالبان کو اقتدار سے بے دخل کر دیا تھا۔ یہ گروپ اسامہ بن لادن اور القاعدہ کے ان دیگر افراد کو پناہ دے رہا تھا جو امریکہ میں ہونے والے نائن الیون کے حملوں میں ملوث تھے۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ امریکی افواج نے اس بات کو یقینی بنایا ہے کہ افغانستان ایک بار پھر غیر ملکی جہادیوں کا مغرب کے خلاف سازشوں کا اڈہ نہیں بن سکتا۔

دوسری جانب افغانستان کے صدر اشرف غنی کا اصرار ہے کہ ملک کی سکیورٹی فورسز باغیوں کو قابو میں رکھنے کی پوری قابلیت رکھتی ہیں لیکن بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ غیر ملکی افواج کے انخلا سے ملک پر دوبارہ طالبان کا کنٹرول ہو سکتا ہے۔