• 425
    Shares

نصیر الدین شاہ کے پر دادا جان فشاں خان پشتوں بیلٹ کے "وار لارڈ” تھے (گھر کا چولہا جنگ سے چلتا تھا)۔ 1839 کی پہلی افغان انگریز جنگ میں اس شخص نے اپنی قوم سے غداری کی اور برطانیہ کا ساتھ دیا۔ اس عوض میں انگریز نے اس پٹھان "میر صادق” کو سردھنہ میرٹھ کی جاگیر عنایت کردی۔ اس احسان کا بدلہ چکاتے ہوے اس شخص نے 1857 کی جنگ آزادی میں انگریز کا ساتھ دیا۔ یہ خاندان ہمیشہ سے ملک وملت سے غداری میں آگے آگے رہا۔ (مفتی یاسر ندیم الواجدی )

ممبئی : 7 ستمبر (ورق تازہ نیوز) گزشتہ دنوں بالی وڈ اداکار نصیرالدین شاہ نے افغانستان میں طالبان کی واپسی پر ان کی حمایت کرنے والے بھارتی مسلمانوں کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔ طالبان کی جانب سے افغانستان کے دارالحکومت کابل کا کنٹرول سنبھالنے کے بعد بعض مسلمانوں نے سوشل میڈیا پر خوشی کا اظہار کیا تھا جس پر مودی حکومت نے متعدد افراد کو گرفتار بھی کیا تھا اس حوالے سے بولی وڈ اداکار نصیر الدین شاہ نے بھی ردعمل کا اظہار کیا ہے اور طالبان کی حمایت پر بھارتی مسلمانوں کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

اپنے ویڈیو بیان میں نصیر الدین شاہ کا کہنا تھاکہ طالبان کا دوبارہ حکومت پالینا دنیا کیلئے فکر کا باعث ہے لیکن بھارتی مسلمانوں کا ان کی حمایت میں جشن منانا اس سے کم خطرناک نہیں ہے۔

دریں اثناء آج مشہور مفتی ڈاکٹر یاسر ندیم الواجدی نے نصیر الدین شاہ پر اس ویڈیو پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ وہ صرف ایک مسلم ایکٹر ہیں نا کہ اسلامک اسکالر۔۔۔ دیکھئے مکمل ویڈیو

نصیر الدین شاہ نے اپنے ویڈیو میں کہا تھا کہ میں بھارتی مسلمان ہوں میرا رشتہ اللہ سے بے حد بے تکلف ہے اور مجھے سیاسی مذہب کی کوئی ضروت نہیں۔نصیر الدین شاہ کا کہنا تھاکہ ہندوستانی اسلام ہمیشہ دنیا بھر کے اسلام سے مختلف رہا ہے، اللہ وہ وقت نہ لائے کہ ہم اسے پہچان بھی نہ سکیں۔ان کے بیان پر گودی میڈیا اور بھکتوں نے سوشل میڈیا پر خوشی کا اظہار کیا ہے جبکہ متعدد صارفین نے شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔
نصیر الدین شاہ کا ویڈیو بیان

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔