BiP Urdu News Groups

ممبئی: 14؍جنوری ۔(راست ) ممبئی میں ونچیت بہوجن آگھاڑی کے مسلم قائدین اور کارکنان کا ایک اہم اجلاس منعقد ہوا ۔نئے متنازع زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کی تحریک مسلسل کئی دنوں سے جاری ہے۔ جس کو مختلف حلقوںکی جانب سے زبردست حمایت مل رہی ہے۔ گزشتہ دنوں ونچیت بہوجن آگھاڑی کی جانب سے کسانوں کی حمایت میںریاست کے کئی اضلاع میں مظاہرے منعقد کئے گئے ۔ اسی سلسلہ کو آگے بڑھاتے ہوئے کسانوں کے حق میں اظہار یکجہتی کرنے کے لئے شاہین باغ کی طرز پر’کسان باغ‘ احتجاجی مہم کی شروعات کرنے کا اعلان ونجیت بہوجن آگھاڑی کے قومی صدر پرکاش امبیڈکر نے کیاہے،وہ جلسہ سے خطاب کر رہے تھے۔

انھوں نے مزید کہا کہ ملک میں فرقہ وروں نے حجمومی تشدد کر سینکڑوں مسلمانوں کو زدو کوب کا نشانہ بنایا، انھیں فرقہ ور عناصرنے زات پات کی بنیاد پر ہزاروںدلتوںپر ظلم کیااور اسی استحصالی نظام نے لاکھوں کسانوں پر اتنا ظلم ڈھایا کے کسانوں کو خود کشی کرنے پر مجبور ہونا پڑا، اس کو ہم سرکاری قتل و غارت گیری مانتے ہیں۔کسان اس ملک میں سب سے زیادہ مظلوم ہیں۔

انھوں نے مزید کہا کے جس طرح سے شاہین باغ کی تحریک کو مرکزی حکومت طاقت اور اقتدار کے دم پر ختم کرنا چاہتی تھی اور اس وقت پنجاب کے مختلف حصوں سے آکر ان کسانوں نے شاہین باغ کے پاس اپنالنگر ڈالا اور مسلمانوں کو طاقت اور حوصلہ دینے کا کام کیا۔ اسی طرز پر اب یہ موقع مسلمانوں کو بھی ملا ہے کے وہ پنجاب کے کسان بھائیوں کا احسان ادا کرتے ہوئے ان کے ساتھ یکجہتی اور ہمدردی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنے اپنے شہروں میں کسان باغ تحریک کا آغاز کریں۔ مسلمانوں کی طرح کسان بھی مظلوم ہیں اور ان مظلومین کا مابین اتحاد، ملک میں امن کی بقاء اور سا لمیت کے لئے اشد ضروری ہوگیا ہے ۔ آر۔ایس۔ ایس یہ نہیں چاہتی کے مظلومین ایک جگہہ آئے ، یہی وجہہ ہے کے وہ آئے دن مسلمانوں اور دیگر طبقات کے درمیان تنازعات پیدا کرنے کا کام کرتی ہے۔ مظلومین کو بانٹ کر ان پر ظلم کرناچاہتی ہے۔ اس لئے وقت کی ضرورت یہی ہے کے کسان باغ میں بڑھ چڑھ کر مسلمانوں نے حصہ لینا چاہیے اور اس ملک کے مستقبل کو محفوظ بنانے کے لئے اور آر ایس ایس جیسی تنظیم کو اقتدار سے دوررکھنے کے لئے تمام مظلومین میں اتحاد ہونا ضروری ہے۔

اس اجلاس میں ونچیت بہوجن آگھاڑی کے قومی نائب صدر ڈاکٹر ارون ساونت ، شعبہ خواتین کی ریاستی صدر ریکھاتائی ٹھاکور،ریاستی ترجمان فاروق احمد، گوونددلوی ،سدھارتھ موکلے ، دشا پنکی شیخ،واشیم منگرول پیر کی چیرمین ڈاکٹر غزالہ خان، ونچیت بہوجن آگھاڑی کے لوک سبھا اور اسمبلی کے امیدوار ان، ضلع صدورکے علاوہ ناندیڑ،پربھنی،بلڈھانہ،پرلی بیڑ، اکولہ،اورنگ آباد، لاتور، ناشک،عثمان آباد، پونے،واشیم،امراوتی،ااندھیری، تھانے،سائن، دھاراوی،کاندیولی،پال گھر، احمد نگر،گھاٹ کوپر، ساتارہ ، ممبئی و دیگر اضلاع کے سینکڑوں مسلم کارکنان بھی موجود تھے ۔