• 425
    Shares

کلکتہ ، یکم ستمبر(یواین آئی) جادو پور یونیورسٹی انتظامیہ نے شادی کا وعدہ کرکے طالبہ کے ساتھ جسمانی تعلقات قائم کرنے اور پھر شادی سے انکار کرنے پر پروفیسر کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے یونیورسٹی سے معطل کردیا ہے۔

طالبہ ننے شکایت کی تھی کہ پروفیسر نے ان سے پہلے فون پر لمبی لمبی بات کرتے تھے اس کے بعد پیار کا اظہار کرنے لگے اور شادی کا وعدہ کرنے کے بعد جسمانی تعلقات بھی قائم کئے ۔یونیورسٹی کے رجسٹرار سنہامنجو باسو نےپروفیسر کو کام کرنے سے روک دیا گیا ہے۔جب تک ان کے خلاف جانچ مکمل نہیں ہوجاتی ہے وہ یونیورسٹی میں کام نہیں کریں گے۔

حال ہی میں ایک طالبہ نے لسانیات کے پروفیسر کے خلاف جادوپور پولیس اسٹیشن میں شکایت درج کراتے ہوئے الزام لگایا تھا کہ پروفیسرنے شادی کا وعدہ کرک جسمانی تعلقات قائم کئے اور ا ب شادی سے انکار کررہے ہیں ۔طالبہ نے کہا کہ پروفیسر پہلے فون پر لمبی لمبی بات کرتے تھے، اس کے بعد پیار کا اظہار کیا اور اس طرح قریب ہوتے چلے گئے۔شادی کرنے کا وعدہ کرکے جسمانی تعلقات قائم کیا ۔جادو پور پولیس اسٹیشن نے پروفیسر کے خلاف دفعہ 417 ، 36 اور 506 کے تحت شکایت درج کی ہے۔ تحقیقات کا آغاز جادوپور یونیورسٹی کے اندرونی شکایت سیل نے بھی کردیا ہے ۔یواین آئی۔نور

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔