سویڈن کا قرآن جلانے کے بعد نیٹو میں شمولیت کی ترکی کی جانب سے سخت مخالفت

455

سویڈن اور ترکی کے درمیان کشیدگی بڑھ رہی ہے اور دونوں ممالک سفارتی کشمکش میں پھنسے ہوئے ہیں۔ 21 جنوری کو ڈنمارک کے ایک کارکن راسموس پالودان نے سویڈن کی دارالحکومت اسٹاک ہوم میں ترکی کے سفارت خانے کے باہر اسلام کی مقدس کتاب قرآن مجید کو آگ لگا دی۔ اس کے بعد سے ترک حکومت اور وہاں کے عوام میں ناراضگی پھیل گئی ہے۔ ترکی کے علاوہ کئی مسلم ممالک نے اس واقعے پر سویڈن کی مذمت کی ہے۔

قرآن جلانے کے واقعے کے بعد ترکی نے سویڈن کے وزیر دفاع پال جونسن کا دورہ انقرہ منسوخ کر دیا۔ ترکی سویڈش حکام پر اسٹاک ہوم میں مظاہروں کی اجازت دینے کا الزام لگا رہا ہے۔ مظاہرین اس کے لیے سویڈن کے ریاستی حمایت یافتہ اسلامو فوبیا کی مذمت کر رہے ہیں۔

دوسری جانب سویڈن نیٹو میں شامل ہونے کی کوشش کر رہا ہے۔ اس حوالے سے ترکی اور سویڈن کے درمیان نیٹو سے متعلق معاملے کو مظاہروں سے جوڑ دیا گیا ہے۔ نیٹو میں کوئی بھی ملک اسی وقت شامل ہو سکتا ہے جب تمام رکن ممالک متفق ہوں۔ ادھر ترکی سویڈن کی نیٹو میں شمولیت کے خلاف احتجاج کر رہا ہے۔

سویڈن کی نیٹو میں شمولیت کا تنازع سویڈن کے دارالحکومت اسٹاک ہوم سے شروع ہوا۔ جہاں احتجاج میں شامل افراد نے ترک سفارتخانے کے باہر مظاہرہ کیا۔ مظاہرے کے دوران انتہائی دائیں بازو کی ڈنمارک کی سیاسی جماعت کے رہنما راسموس پالودان نے قرآن کا ایک نسخہ نذر آتش کیا۔

کئی مسلم ممالک نے سویڈن کی جانب سے قرآن کو جلانے کی مذمت کی ہے۔ اس کے جواب میں ترکی کے حامیوں نے سویڈن کا قومی پرچم جلا دیا۔ واضح رہے کہ ترکی پہلے ہی نیٹو کا رکن ہے۔ ترکی بعض شرائط کے تحت سویڈن کی درخواست کو روکنے کے لیے اپنی طاقت کا استعمال کر رہا ہے۔