سعودی عرب کے مدینہ میں ملا بڑا خزانہ،حکومت ہوئی خوش

4,743

سعودی عرب میں سونے اور تانبے کے نئے ذخائر دریافت ہوئے ہیں۔ یہ چیز سعودی عرب کی حکومت کو بہت خوش کرنے والی ہے، کیونکہ سونے کے نئے ذخائر کی دستیابی سے ملک کے بین الاقوامی اور مقامی سرمایہ کار مزید متوجہ ہوں گے، جس سے کان کنی کے شعبے میں مزید سرمایہ کاری میں اضافے کی توقع ہے۔

سعودی عرب کے جیولوجیکل سروے ڈیپارٹمنٹ نے سونے اور تانبے کے نئے مقامات کی دریافت کا اعلان کیا ہے۔ سعودی عرب کے جن علاقوں میں سونے کی دھات کی جگہیں ملی ہیں وہ مدینہ میں ابا الراح، ام البرک شیلڈ، حجاز کی سرحدوں پر واقع ہیں۔مدینہ کے اس علاقے میں سونے کی دریافت اس لیے بھی خاص ہے کہ اس سے قبل ام البرک شیلڈ میں سونے کی دھات کی کمی تھی۔

رپورٹ کے مطابق سعودی عرب میں سونے اور تانبے کی دھات کی نئی دریافتوں سے مقامی اور بین الاقوامی سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کی امید ہے۔ اس دریافت سے تقریباً چار ہزار نئی ملازمتیں پیدا ہونے کی بھی توقع ہے۔

سعودی عرب میں ہونے والی نئی دریافت کے بارے میں تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اس نئی دریافت سے سعودی میں کان کنی کے نئے امکانات پیدا ہوں گے۔ اس سے اس شعبے میں سرمایہ کاری کے مزید مواقع کھلیں گے۔