سعودی عرب کا کئی شعبوں میں مقامی لیبربھرتی کرنے کا فیصلہ

ریاض : سعودی عرب کی وزارت برائے انسانی وسائل اور سماجی ترقی نے دو مزید شعبوں میں مقامی ماہرین اور لیبر بھرتی کرنے کے فیصلے پرعمل درآمد شروع کیا ہے۔ وزارت برائے انسانی وسائل کا کہنا ہے کہ صحت کے پیشوں کو 60 فیصد تک مقامی بنانے کے اقدامات کیے جا رہے ہیں جب کہ طبی آلات کے لیے انجینئرنگ اور تکنیکی پیشوں کے لیے 30 فیصد مقامی شہریوں کی بھرتی کی جا رہی ہے۔ان دونوں شعبوں کا نفاذ ان کے لیے مخصوص کردہ رعایتی مدت کے اختتام کے بعد ہوگا۔ کیونکہ یہ فیصلہ طبی لیبارٹریوں، ریڈیولاجی، فزیوتھراپی اور علاج معالجے کی تمام طبی سہولیات میں کام کرنے والے طبی لیبارٹریوں کی ملازمتوں کوشامل کرنے کے لیے صحت کے خصوصی پیشوں کو مقامی بنانے کے لیے کیا گیا تھا۔اس حوالے سے پیشے کے ماہرین کے لیے کم سے کم اجرت 7,000 ریال اور ٹیکنیشن کے لیے 5,000 ریال مقرر کی گئی ہے۔وزارت برائے انسانی وسائل نے پیر کو ایک بیان میں کہا کہ لوکلائزیشن کی شرح ٹارگٹڈ ہیلتھ اسپیشلٹیز میں کارکنوں کی کل تعداد کا 60 فیصد ہو گی اس لیے یہ فیصلہ مرد اور خواتین شہریوں کے لیے 5,600 سے زیادہ ملازمتیں فراہم کرے گا۔طبی آلات کے شعبے میں پیشوں کو لوکلائز کرنے کے فیصلے میں سیلز اور ایڈورٹائزنگ کے پیشوں کی لوکلائزیشن اور دو مرحلوں میں میڈیکل ڈیوائسز اور سپلائیز کا تعارف شامل ہے۔ پہلے مرحلے میں 40 فیصد اور دوسرے مرحلے میں 80 فیصد لوکلائزیشن شامل ہے۔ میڈیکل ڈیوائسز کے لیے انجینئرنگ اور تکنیکی پیشے میں پہلے مرحلے میں 30 اور دوسرے مرحلے میں %50 عملے کو مقامی بنانے کے اقدامات کیے جائیں گے۔ پہلے مرحلے میں مقامی شہریوں کے لیے تین ہزار ملازمتیں تخلیق کرے گا۔