سعودی آئی ٹی مکہ،مدینہ میں 41 فی صدمزید5جی ٹاورز کے ساتھ عازمینِ حج کی خدمت کوتیار

0 14

سعودی عرب کے ڈیجیٹل ریگولیٹرکمیونی کیشن اینڈ انفارمیشن ٹیکنالوجی کمیشن (سی آئی ٹی سی) نے کہا ہے کہ اس کا آئی ٹی انفراسٹرکچر اب مکمل طورپرفعال ہے اور مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں ضیوف الرحمٰن کی خدمت کے لیے تیار ہے۔
سعودی پریس ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق رواں موسمِ حج میں قریباً دس لاکھ عازمین فریضہ حج ادا کریں گے۔ سی آئی ٹی سی نے اس بات کو یقینی بنایا ہے کہ اس کا ٹھیک بنیادی ڈھانچا موجود ہو تاکہ عازمین مقدس شہروں میں اپنے قیام کے دوران میں ایک دوسرے سے اور اپنے پیاروں سے رابطے میں رہیں۔

ریگولیٹر نے کہا کہ اس نے متعلقہ علاقوں میں 41 فی صد زیادہ 5 جی ٹاور نصب کیے ہیں۔ موبائل نیٹ ورکس کے ذریعے تیزرفتار روابط کو یقینی بنانے کے لیے اب 2600 5جی ٹاورز کے علاوہ 5900 کمیونیکیشن ٹاورز اور 11000 وائی فائی رسائی پوائنٹس بھی موجود ہیں۔سی آئی ٹی سی کے گورنر ڈاکٹرمحمد بن سعود التمیمی نے کہا کہ مملکت کے بنیادی ڈھانچے کی تیاری سے نہ صرف زندگی بھرکے خواب کو پورا کرنے میں مدد ملے گی بلکہ اس سے ان کے ڈیجیٹل تجربے میں بھی نمایاں اضافہ ہوگا۔کووڈ-19 کی وَبا کے آغاز کے بعد بیرون ملک سے تعلق رکھنے والے فرزندانِ توحید رواں سال پہلی بار فریضہ حج ادا کریں گے۔گذشتہ دوسال کے دوران میں بیرون ملک سے عازمین حج کی سعودی عرب میں آمد پر پابندی رہی ہے۔

سی آئی ٹی سی کے گورنر کا کہنا تھا کہ ’’کرۂ ارض کے ہر حصے سے عازمینِ حج کی سعودی عرب میں آمد کے بعد ہم اس بات کویقینی بنارہے ہیں کہ اس سال انھیں تاریخ کا سب سے اختراعی اورباہمی تعامل پرمبنی تجربہ حاصل ہو۔ یہی وجہ ہے کہ زندگی بدلنے والے اس تجربے کو بلا روک ٹوک بنانے کی صلاحیت بہت اہم ہے‘‘۔حج کے بعدعیدالاضحیٰ منائی جاتی ہے۔مسلمان روایتی طور پراس عید پربھیڑ، بکریوں ، گائے ، اونٹ کی قربانی کرتے ہیں اور قربانی کا گوشت دوستوں، اہل خانہ اور غریبوں میں تقسیم کرتے ہیں۔سعودی عرب میں عدالتِ عظمیٰ کے اعلامیے کے مطابق 9 جولائی کو عیدالاضحیٰ کا پہلا دن ہوگا اور اس کے بعد پانچ دن کی چھٹی ہوگی۔