۔10 کروڑ چھوٹے کسانوں کو فائدہ شروع ہوچکا۔ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے صدرکووند کا خطاب

نئی دہلی:صدر رام کووند نے آج کہا ہے کہ تین زرعی اصلاحاتی قوانین کو متعارف کرانے کے ساتھ ہی ، کسانوں کو نئے حقوق بھی دئے گئے ہیں اور ان قوانین سے پہلے جو حقوق اور سہولیات موجود تھیں وہ کم نہیں کی گئیں۔پارلیمنٹ کے بجٹ اجلاس کے پہلے روز سینٹرل ہال میں دونوں ایوانوں کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مسٹر کووند نے کہا کہ سات ماہ قبل پارلیمنٹ نے تین اہم زرعی اصلاحات ، کسان پیداواری تجارت اور تجارت پر دستخط کیے تھے ۔ (فروغ اور آسانیاں) بل ، زراعت (اختیار اور تحفظ) نے قیمت ، یقین انشورنس اور زرعی خدمات کا معاہدہ بل ، اور ضروری اشیا ترمیمی بل منظور کئے ہیں۔انہوں نے کہا ، “ان زرعی اصلاحات کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہے کہ 10 کروڑ سے زائد چھوٹے کسانوں کو فوری طور پر فائدہ ملنا شروع ہوا۔ چھوٹے کاشتکاروں کو ہونے والے ان فوائد کا ادراک کرنے کے بعد ہی بہت ساری سیاسی جماعتوں نے وقتا فوقتا ان اصلاحات میں مکمل حمایت کی تھی۔ فی الحال ، ملک کی اعلیٰ ترین عدالت نے ان قوانین کے نفاذ کو ملتوی کردیا ہے ۔ میری حکومت سپریم کورٹ کے فیصلے کا احترام کے ساتھ اس پر عمل کرے گی ۔مسٹر کووند نے کہا ، “میری حکومت یہ واضح کرنا چاہتی ہے کہ تین نئے زرعی قوانین نافذ کیے جانے سے قبل ، پرانے نظام کے تحت جو حقوق اور سہولیات تھیں ان میں کوئی کمی نہیں کی گئی تھی۔ بلکہ ان زرعی اصلاحات کے ذریعے حکومت نے کسانوں کے حقوق کے ساتھ ساتھ نئے حقوق بھی دیئے ہیں۔صدر نے کہا کہ حکومت نے گذشتہ چھ برسوں میں بیج سے لیکر بازار تک ہر نظام میں مثبت تبدیلی کی کوشش کی ہے ، تاکہ ہندوستانی زراعت جدید بن سکے اور زراعت کو بھی وسعت دی جاسکے ۔ حکومت نے سوامی نا تھن کمیشن کی سفارشات کو نافذ کرتے ہوئے لاگت سے ڈیڑھ گنا کم از کم سہارا قیمت (ایم ایس پی) ادا کرنے کا بھی فیصلہ کیا تھا۔ حکومت نہ صرف ریکارڈ مقدار میں ایم ایس پی پر ریکارڈ خریداری کررہی ہے بلکہ خریداری مراکز کی تعداد میں بھی اضافہ کررہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ 2013-14 میں صرف 42 لاکھ ہیکٹر اراضی میں آبپاشی کی سہولیات موجود تھیں جبکہ آج 56 لاکھ ہیکٹر سے زائد اضافی اراضی کوآبپاشی کے نظام سے منسلک کیا گیا ہے ۔ اسی عرصے کے دوران سبزیوں اور پھلوں کی پیداوار بھی 21.5 کروڑ ٹن سے بڑھ کر 32 کرو ٹن ہوگئی ہے ۔ اس کے لئے ملک کے کسانوں کو مبارکباد ہے ۔انہوں نے کہا کہ آج ملک میں اناج کی دستیابی ریکارڈ سطح پر ہے ۔ سال 2008-09 میں ، جہاں ملک میں 23.4 کروڑ ٹن غلہ تھا ، سال 2019۔20 میں ملک کی پیداوار بڑھ کر6. 96 کروڑ ٹن ہوگئی ہے ۔ وقت کی ضرورت یہ ہے کہ ایسے چھوٹے اور پسماندہ کاشتکاروں پر خصوصی توجہ دی جائے جن کے پاس زرعی شعبے میں صرف ایک یا دو ہیکٹر اراضی ہے ۔ ملک کے تمام کسانوں میں 80 فیصد سے زیادہ چھوٹے کسان ہیں اور ان کی تعداد 10 کروڑ سے زیادہ ہے ۔


اپنی رائے یہاں لکھیں