بیجنگ: روس نے طالبان کی طرف سے تعینات کیے گئے پہلے سفارت کار کو تسلیم کر لیا ہے۔ روسی وزیر خارجہ سرگئی لاؤروف نے جمعرات کو یہ اطلاع دی۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان میں طالبان حکومت کی جانب سے تعینات کیے گئے پہلے سفارت کار کو روس نے تسلیم کرلیا ہے۔

چین کے شہر تونشی میں افغانستان کے ہمسایہ ممالک کے وزرائے خارجہ کے تیسرے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سرگئی لاؤروف نے کہا، ”میں اس بات کی نشاندہی کرنا چاہوں گا کہ نئے حکام کی طرف سے بھیجے گئے پہلے افغان سفارت کار کو، جو گزشتہ ماہ ماسکو پہنچے تھے، کو تسلیم کیا گیا ہے‘‘۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ افغانستان کی سرحد سے متصل ممالک میں امریکی یا نارتھ اٹلانٹک ٹریٹی آرگنائزیشن (ناٹو) کے فوجیوں کی موجودگی قابل قبول نہیں ہے۔ روسی خبر رساں ایجنسی اسپوتنک نے لاؤروف کا حوالہ دیتے ہوئے کہا "جیسا کہ ہم پہلے ہی کہہ چکے ہیں، ہم بنیادی طور پر وسطی ایشیا میں امریکی اور ناٹو کے فوجی انفراسٹرکچر کی تعیناتی کو مسترد کرتے ہیں‘‘۔