رمضان المبارک رمضان کے آتے ہی 11 مہینوں سے بنی روٹین اچانک بدل جاتی ہے اس وقت عام طور پر روزہ تقریباً چودہ سے پندرہ گھنٹوں کے دورانیے کا ہے اور موسم عام طور پر گرم ہے کچھ افراد کو افطاری سے کچھ گھنٹے قبل سر درد کی شکایت رہنے لگتی ہے – روزے کے باعث ہونے والا سر درد ماتھے کے سامنے والے حصے کی جانب ہوتا ہے اس میں عام طور پر ہونے والے درد کی طرح دھمک نہیں ہوتی ہے مگر مائگرین کے مریضوں کے سر میں ہونے والا یہ درد بہت شدید ہوتا ہے اس کے علاوہ عام طور پر جو لوگ بار بار عام زندگی میں بھی سر درد کا شکار ہوتے ہیں ان کے سر میں روزے کے باعث ہونے والے سر درد کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں-

طبی ماہرین کے مطابق رمضان میں اکثر افراد کے سر میں اُٹھنے والے درد کی متعدد بڑی وجوہات ہیں جن میں سحری سے قبل اُٹھنا یا سحری کا چھوٹ جانا، نیند میں کمی اور مطلوبہ غذائیت کا حاصل نہ کرنا ہے، عام دنوں میں جو افراد کیفین کا زیادہ استعمال کرتے ہیں ان کے خون میں کیفین کی اچانک کمی اور روزے کے سبب کھانا نہ کھانا بھی سر درد کی وجوہات میں شامل ہے . طبی ماہرین کے مطابق سر درد کی وجوہات میں رمضان میں افطار کے بعد زیادہ مقدار میں پانی نہ پینا، جسم میں پانی کی کمی، قبض کی شکایت، مناسب پانی کی مقدار نہ پینا اور دوبارہ روزہ رکھ لینا، بلڈ پریشر کا کم ہونا شامل ہیں –

علاوہ ازیں روزے کی حالت میں سر درد کی وجوہات ہائپو گلائسیمیا عام طور پر جب انسان ایک طویل وقت تک کچھ نہیں کھاتا ہے تو اس کے سبب اس کے خون میں شوگر کی مقدار عام طور پر موجود مقدار سے کم ہونے لگتی ہے جو کہ سر کے درد کا باعث بن سکتی ہے- مگر ماہرین کے نزدیک یہ کوئی حتمی وجہ نہیں ہو سکتی ہے کیوںکہ اکثر اوقات جب کہ خون کے اندر شکر کی مقدار نارمل لیول پر بھی ہو تو اس صورت میں بھی سر کا درد ہو سکتا ہے – ان سے بچاؤ کے لیے ماہرین کی جانب سے تجویز کیے گئے مشوروں سے فائدہ حاصل کیا جا سکتا ہے ماہرین کے مطابق رمضان کے لیے خود کو تیار کرتے ہوئے اس کی آمد سے قبل ہی بھوک کم کر دینی چاہیے، اضافی کچھ بھی کھانے سے پرہیز کرنا چاہیے.