رام مندر تعمیر نہیں ہوا تو نریندر مودی کوہٹادیں گے‘ پروین توگڑیا کی دھمکی

لکھنو¿: 21اکتوبر۔(ایجنسیز) اجودھیا میں رام مندرکی تعمیرکا مطالبہ کرتے ہوئے راشٹریہ ہندوپریشد کے پروین توگڑیا نے اتوارکومرکزکی نریندرمودی حکومت کو انتباہ دیا ہے کہ اسے اس معاملے کو حل قانون بنا کرکرنا ہوگا، ورنہ نتائج ان کے برخلاف ہوں گے۔ انہوں نے دھمکی دیتے ہوئے کہا کہ اگررام مندرکی تعمیرنہیں کی جاتی ہے، تو دوسرا وزیراعظم تلاش کرلیں گے۔اجودھیا کوچ کرنے کی تیاری میں لگے توگڑیا نے یہاں ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا ”نریندرمودی نے وزیراعظم بننے کے بعد ایک باربھی رام کا نام نہیں لیا۔ ہم انتباہ دینا چاہتے ہیں کہ اگررام مندرکی تعمیرکے لئے قانون نہیں بنایا گیا، توہم وزیراعظم بھی تبدیل کر سکتے ہیں۔ جورام کا احترام نہ کرسکے، وہ کسی کام کا نہیں ہے”۔انہوں نے کہا کہ رام مندرکے لئے جدوجہد کافی پرانی ہے۔ نریندرمودی سے پہلے مندرکی تعمیرکا چیلنج سابق وزیراعظم راجیو گاندھی، نرسمہا راو¿اوراٹل بہاری واجپئی کے سامنے بھی تھا۔ یہ کروڑوں ہندوں کے عقیدے سےجڑا ہوا موضوع ہے۔ پروین توگڑیا نے کہا کہ صرف مندرکا معاملہ ہی نہیں ہے۔ ہم مندرتوسریوکے دوسری جانب بھی بنا سکتے ہیں، لیکن کیا شری رام کی جنم بھومی وہاں سے 100 میٹرکھسک سکتی ہے۔ہندوو¿ں کے کھوئے ہوئے احترام پانے کے لئے ہم اکٹھے ہوئے ہیں۔ یہ خواب اشوک سنگھل سمیت سینکڑوں ہندو¿وں کا ہے۔ یہ خواب وزیر اعلی یوگی ا?دتیہ ناتھ اورمہنت اویدھ ناتھ کا بھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہزاروں سال سے ہندوسماج رام مندرکی لڑائی لڑرہا ہے۔ 1984 میں ہم نے مندرتحریک شروع کی، تب بھی معاملہ عدالت میں تھا۔ تب کسی بی جے پی والے نے نہیں کہا تھا کہ معاملہ عدالت میں زیرسماعت ہے۔ اس دوران لال کرشن اڈوانی نے رتھ یاترا نکالی تھی۔

Leave a comment