دہلی فسادات: اشوک نگر میں مسجد نذر آتش ، مینار پر ہنومان پرچم لگا

مسجد کے قریب دکانوں کو لوٹا جارہا تھا ، مقامی لوگوں نے لٹیروں کو ‘بیرونی’ بتایا تھا۔

♨️Join Our Whatsapp 🪀 Group For Latest News on WhatsApp 🪀 ➡️Click here to Join♨️

نئی دہلی: منگل کی سہ پہر کو اشوک نگر کی ایک مسجد میں آگ لگادی گئی ۔ جلتی ہوئی مسجد کے ارد گرد "جئے شری رام” اور "ہندوون کا ہندوستان” نعرہ لگانے والے ہجوم نے مسجد کے مینار پر ایک ہنومان کا جھنڈا چڑھا دیا

اس کے بعد ٹویٹر پر سامنے آنے والی ویڈیو فوٹیج میں ، ہجوم میں سے ایک ہاتھ میں ہندوستانی پرچم کے ساتھ مینار پر چڑھتا ہوا نظر آتا ہے۔ اس نے میناروں کے ایک حصہ کو نیچے کھینچنے کی کوشش کی لیکن بظاہر اس میں کامیاب نہیں ہوا۔

جوتے کے دکان سمیت مسجد کے احاطے کے اندر اور آس پاس کی دکانوں کو لوٹ لیا گیا۔ مقامی لوگوں نے دی وائر کو بتایا کہ لٹیرے والے اس علاقے کے رہائشی نہیں تھے ، جو بنیادی طور پر ہندو ہیں لیکن ان کے بہت کم مسلمان خاندان ہیں۔ اگرچہ جائے وقوعہ پر فائر فائٹرز موجود تھے ، لیکن پولیس نظر نہیں آ سکی۔

مقامی لوگوں نے یہ بھی کہا کہ پولیس نے مسلم برادری کے افراد کو علاقے سے ہٹا دیا۔

یہ بھی پڑھیں:  اہم خبر: میں پیدائشی مسلمان ہوں اور رہوں گی، نصرت جہاں کا بیان

اتوار کی شام سے ہی دہلی میں ہنگامہ آرائی اور ہدف بنا ہوا تشدد دیکھنے کو ملا ، جس کی وجہ سے دہلی پولیس کو بی جے پی رہنما کپل مشرا کے ‘الٹی میٹم’ نے جنم دیا کہ شہریوں کے خلاف انسداد (ترمیمی) ایکٹ (سی اے اے) مظاہرین اور جعفرآباد اور چاند باگ کو تین دن کے اندر ختم کردیا جائے۔

کم از کم دس افراد اس تشدد میں ہلاک ہوچکے ہیں ، جن میں ایک ہیڈ کانسٹیبل بھی شامل ہے۔ بہت سے علاقوں میں ، پولیس پر یہ الزام لگایا گیا ہے کہ وہ مسلمانوں پر حملہ کرنے میں ہندوتوا گروپوں کا ساتھ دیتا ہے۔ منگل کے روز ، متعدد صحافیوں پر بھی حملہ کیا گیا ، ہجوم نے فون چھینتے ہوئے اور زبردستی زبردستی ایسی ویڈیوز یا تصاویر کو حذف کردیں جن میں آتش زنی اور توڑ پھوڑ کی مثالیں درج تھیں

WARAQU-E-TAZA ONLINE

I am Editor of Urdu Daily Waraqu-E-Taza Nanded Maharashtra Having Experience of more than 20 years in journalism and news reporting. You can contact me via e-mail waraquetazadaily@yahoo.co.in or use facebook button to follow me