دبئی: دبئی میں ایک ہندوستانی سے  چار خواتین کے گینگ کے ذریعہ مبینہ طور پر 5530806 روپے لوٹنے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ میڈیا میں شائع ہونے والی خبر کے مطابق ، ان خواتین نے متاثرہ (43 ) کو ڈیٹنگ ایپ پر جعلی مساج پارلر کا لالچ دیا تھا ۔ گلف نیوز کے مطابق ، دبئی کی عدالت میں معاملے کی پہلی  سماعت  ہوئی ۔ عدالتی دستاویزات کے مطابق ، متاثرہ شخص ( جس کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی) کو خوبصورت لڑکیوں کی  تصاویر دکھا کر 200 درہم (تقریبا 33950 روپے)  میں مساج کرنے کی پیشکش کی گئی ، جس پر  متاثرہ شخص نے  ایپ پر  موجود فون نمبر پر رابطہ کیا  اور  نومبر 2020 میں دبئی  کے الرفا علاقے میں اپارٹمنٹ میں پہنچ گیا ۔

متاثرہ شخص نے بتایا کہ جب وہ اپارٹمنٹ گیا تو وہاں چار افریقی خواتین تھیں … انہوں نے اس سے  موبائل پر بنک  کا ایپ کھولنے کے لئے کہا اور  روپے ت ٹرانسفر کر دئیے ۔  انہوں نے گلے پر چاقو رکھ کر دھمکی دی  اور تھپڑ مارے ۔ متاثرہ شخص  نے بتایا کہ ایک خاتون نے  اس کا کریڈٹ کارڈ چھین لیا اور اے ٹی ایم سے 30 ہزار درہم (592586 روپے) نکال لئے ، جبکہ ایک دن تک اس کو اپارٹمنٹ میں یرغمال بنا کر رکھا گیا اور خواتین نے بنک  اکاؤنٹ سے  250000 درہم (4938219 روپے نکال لئے )۔ متاثرہ شخص نے بتایا کہ انہوں نے اس کا  آئی فون لینے کے بعد ہی  اپارٹمنٹ  سے جانے دیا  بعد میں ، اس نے ا سکی جانکاری بنک کو دی اور پولیس شکایت درج کروائی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ نائجیریا کی تین خواتین کو شارجہ سے گرفتار کیا گیا ہے جبکہ چوتھی خاتون اب بھی مفرور ہے۔ پولیس نے بتایا  ہ  کہ ایک خاتون نے اعتراف کیا ہے کہ وہ ٹنڈر ایپ کے ذریعے خوبصورت خواتین کی تصاویر دکھا کر مساج  کا لالچ دیتی ہیں ۔  وہ متاثرہ شخص کو اپارٹمنٹ میں بند رکھتی ہیں اور ان  کے کھاتے سے رقم نکا ل کر ملک سے باہر  کھاتوں میں منتقل کرتی ہیں ۔پولیس نے بتایا کہ تینوں خواتین کے خلاف ڈکیتی ، دھمکی ، غیر قانونی یرغمالی اور جسم فروشی کا مقدمہ درج کیا گیا ہے۔