دارالعلوم دیوبند کے طالب علم کو این آئی اے نے پوچھ گچھ کے بعد رہا کردیا

707

دیوبند:(ایجنسیز)موصولہ اطلاعات کے مطابق ہاسٹل کے کمرہ نمبر 25 سے کرناٹک کے رہنے والے عمر فاروق کو چند گھنٹوں کی پوچھ گچھ کے بعد رہا کیا گیا۔ ڈی آئی جی سدھیر کمار نے بتایا کہ حراست میں لئے گئے طالب علم کا تعلق کرناٹک کے بیلاری ضلع سے ہے۔ این آئی اے کی ٹیم اسے سہارنپور لے گئی اور تقریباً 8 گھنٹے تک پوچھ گچھ کی۔

اطلاعات کے مطابق دیوبند میں یہ کارروائی این آئی اے اور یوپی اے ٹی ایس نے مشترکہ طور پر انجام دیتے ہوئے دارالعلوم دیوبند میں زیر تعلیم طالبعلم کو شک کی بنیاد پر پوچھ تاچھ کے لئے حراست میں لیا تھا۔ دارالعلوم دیوبند کے ذرائع نے اس واقعہ کی تصدیق کی ہے۔یوم آزادی کے ٹھیک پہلے دیوبند میں کی گئی این آئی اے اور اے ٹی ایس کی اس کارروائی سے کھلبلی مچ گئی۔ دوپہر بعد طالبعلم کے چھوڑے جانے کے بعد انتظامیہ نے راحت کی سانس ضرور لی ہے مگر عوام ایک انجانے خوف میں مبتلا ہو گئے ہیں۔ ایس ایس پی سہارنپور کے مطابق یہ کارروائی این آئی اے نے کی ہے اور پولیس اس سلسلہ میں کوئی معلومات نہیں دے سکتی۔

واضح رہے اتوار کے روز این آئی اے نے مبینہ طورپر دہشت گرد تنظیم آئی ایس آئی ایس سے تعلق رکھنے کے الزام میں ملک کی نصف درجن ریاستوں کے درجن بھر مقامات پر چھاپہ ماری کر کے کئی نوجوانوں کو حراست میں لیا ہے۔ این آئی اے نے جن ریاستوں میں چھاپہ ماری کی ہے، ان میں مدھیہ پردیش، بہار، کرناٹک اور مہاراشٹر شامل ہیں۔