• 425
    Shares

ہندوستان کے ساتھ ساتھ دنیا کے کئی ممالک میں کورونا کا قہر جاری ہے۔ سبھی ممالک میں کورونا پر قابو پانے کے لیے زیادہ سے زیادہ ٹیکہ کاری پر زور دیا جا رہا ہے، لیکن سب سے فکر انگیز بات یہ ہے کہ ٹیکہ کاری کے بعد بھی لوگ بڑی تعداد میں کورونا کی زد میں آ رہے ہیں۔ انسکاگ نے ایک بلیٹن جاری کرتے ہوئے ڈیلٹا ویریئنٹ پر فکر کا اظہار کیا ہے۔ اس نے کہا ہے کہ اب تک 72 ہزار سے زائد سیمپل کی جینوم سیکوئنسنگ ہوئی ہے جن میں 20 ہزار سے زیادہ سیمپل میں ڈیلٹا ویریئنٹ مل چکا ہے۔

رپورٹ کے مطابق ملک میں اب تک 72 ہزار 931 سیمپل کی جینوم سیکوئنسنگ ہوئی ہے جن میں سے 30 ہزار 230 میں کورونا کے سنگین ویریئنٹ مل چکے ہیں۔ ان میں سب سے زیادہ 20 ہزار 234 سیمپل میں ڈیلٹا ویریئنٹ نکلے ہیں۔ ڈیلٹا سے ہی نکلے کپّا اور ڈیلٹا-15407 سیمپل ملے ہیں۔ ان کے علاوہ 4 ہزار 218 میں الفا، 218 میں بیٹا اور دو سیمپل میں گاما ویریئنٹ ملے ہیں۔

انسکاگ نے اپنی رپورٹ میں برطانیہ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ 6.7 کروڑ کی آبادی والے ملک میں اب تک 18 لاکھ سے زیادہ لوگ کورونا سے متاثر ہو چکے ہیں، اور یہاں 1.20 لاکھ لوگ ایسے ہیں جو کورونا ویکسین لینے کے باوجود انفیکشن کا شکار ہو گئے ہیں۔ یہ بات لوگوں میں خوف پیدا کرنے والی ہے، کیونکہ لوگ بڑی تعداد میں ویکسین لے رہے تھے تاکہ کورونا انفیکشن سے بچا سکے۔ بتایا جا رہا ہے کہ کورونا کے کچھ خطرناک ویریئنٹ ہیں جو کئی بار ویکسین لے چکے شخص کو بھی اپنا شکار بنا رہے ہیں۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔