خواتین اراکین پارلیمان کے ساتھ ششی تھرور کی لی گئی سیلفی فحش: پورندیشوری

10

ترواننت پورم، 30نومبر (یو این آئی) کانگریس کے لیڈر ششی تھرور خواتین اراکین پارلیمان کے ساتھ اپنی سیلفی کے لئے اس وقت سرخیوں میں ہیں ا س تصویر پر لوگوں کے ردعمل آرہے ہیں ان ہی میں سے ایک ہیں بی جے پی کی قومی جنرل سکریٹری دگوباتی پورندیشوری ہیں، جنہوں نے اسے فحش قرار دیا ہے محترمہ پورندیشوری نے ٹوئٹر پر لکھا ہے کہ لوک سبھا ایک مقدس جگہ ہے، جہاں عوامی امور پر بحث کی جاتی ہے، فیصلے کئے جاتے ہیں۔ یہ افسوسناک ہے کہ مسٹر ششی تھرور لوک سبھاکو اس لئے پرکشش مانتے ہیں کیونکہ یہاں خواتین اراکین پارلیمان ہیں۔ یہ فحش ہے اور یہ جمہوریت کے سب سے بڑے ایوان کے احترام کم کیا جارہا ہے۔

ترواننت پورم سیٹ سے لوک سبھاحلقہ کی نمائندگی کررہے مسٹر تھرور پیر کو اس وقت سوالا ت کے گھیرے میں آگئے جب انہوں نے ٹوئٹر پر پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس کے پہلے دن چھ خواتین اراکین پارلیمنٹ کے ساتھ لی گئی ایک سیلفی کو سوشل میڈیا پر شیئر کیا تھا۔سیلفی کے ساتھ دیئے گئے کیپشن نے بھی لوگوں کی توجہ مبذول کی جس میں مسٹر تھرو ر نے لکھا تھا کہ کون کہتا ہے کہ لوک سبھا کام کرنے کے لئے پرکشش جگہ نہیں ہیں؟ اپنی چھ ساتھ اراکین پارلیمنٹ کے ساتھ آج صبح۔

اس تصویر میں مسٹر تھرور سپریہ سولے، پرنیت کور، تمی جاچی، ممی چکرورتی، نصرت جہاں اور جیوتی منی کے درمیان نظر آرہے ہیں۔تنقید کے بعد انہوں نے اپنی صفائی میں ٹوئٹ کیا کہ یہ سیلفی اچھے موڈ میں لی گئی ہے اور اس کی شروعات خواتین اراکین پارلیمنٹ نے کی تھی۔ انہوں نے ہی مجھے ٹوئٹ کرنے کے لئے کہا۔انڈین فورن سروس (آئی ایف ایس) سے ریٹائرمنٹ کے بعد سیاست میں آئے مسٹر تھرور نے لکھا کہ مجھے افسوس ہے کہ کچھ لوگوں کو اعتراض ہوا ہے لیکن مجھے اس پہل میں جوڑے جانے کی خوشی ہے جو کام کرنے کی جگہ پر دوستی کو پیش کرتی ہے۔ یہ بس اسی کے لئے ہے۔