خبردار!کورونا کے بعد ایک اور جان لیوا فلو پھیلنے کا خطرہ، جوانسانوں کیلئے انتہائی خطرناک ہے

نئی دہلی:(ایجنسیز)ایک طرف دنیا کے تقریبا سبھی ممالک کورونا وائرس کی زد میں ہیں تو وہیں فلیپیز سے ایک اور بری خبر سامنے آئی ہے ۔ فلیپینز کے شمالی خطہ میں ایک اور جان لیوا فلو پھیلنے کا معاملہ سامنے آیا ہے ۔ یہ ایک برڈ فلو کی طرح ہے اور بٹیر سے پھیل رہا ہے ۔ حالانکہ ابتدائی جانچ میں سامنے آیا ہے کہ یہ انسانوں کیلئے بھی کافی خطرناک ثابت ہوسکتا ہے.

فلیپینز کے فارم منسٹر نے پیر کو بتایا کہ یہ انتہائی متعدی فلو ہے جو ایچ 5 این 6 اور انفلوئنزا اے وائرس کی کٹیگری کا ہے ۔ اس کی موجودگی سب سے پہلے ایک بٹیر فارم میں پائی گئی ہے ۔  فلیپینز کے ایگریکلچر سکریٹری ولیم ڈار نے بتایا کہ اسی علاقہ میں سال 2017 میں برڈ فلو بھی پھیلا تھا ۔ اس دوران بھی یہ ایک بٹیر فارم سے پھیلنا شروع ہوا اور ایک ہی فارم کے 1500 سے زیادہ بٹیر ایک دن میں مرگئے ولیم ڈار نے مزید بتایا کہ تحفظ کے پیش نظر فی الحال 12000 سے زیادہ بٹیروں کو مار کر محفوظ مقامات پر ضائع کردیا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ فی الحال حالات قابو میں ہیں اور فارم کے آس پاس سات کلومیٹر تک پیرامیٹر بناکر امدادی اور سینیٹیشن کا کام کیا جارہا ہے ۔ اس علاقہ سے ملک بھر میں کہیں بھی پرندوں کی برآمد پر روک لگادی گئی ہے ڈار کے مطابق صرف ایک ہی فارم میں یہ معاملہ سامنے آیا ہے ، لیکن وائرس کافی متعدی اور خطرناک ہے ، اس لئے احتیاط برتی جارہی ہے ۔محکمہ زراعت سے وابستہ اور ایوین فلو کے ماہر ڈاکٹر آرلین ویوٹکو نے بتایا کہ اس وائرس کے انسانوں میں تیزی سے پھیلنے کا پورا خدشہ ہے ، اس لئے احتیاط برتی جارہی ہے ۔ حالانکہ فی الحال یہ کسی انسان تک پہنچا ہے ، اس کا اندیشہ نہ کے برابر ہے ۔ ڈاکٹر آرلین کے مطابق ابھی تک اس سے کسی کی موت نہیں ہوئی ہے ۔ لوگوں کو صرف ایک دن پرانے انڈے ہی استعمال کرنے کا مشورہ دیا جارہا ہے (بہ شکریہ نیوز۱۸ اردو)