کسانوں کے مطالبات کو نظرانداز کردینے پر یونین لیڈروں کا شدید ردعمل

نئی دہلی : کسان لیڈروں نے کہا کہ بی جے پی زیرقیادت نریندر مودی حکومت کو رام بنا کر گدی پر بٹھایا گیا تھا لیکن یہ حکومت راون جیسا برتاؤ کررہی ہے۔ زرعی قوانین کے خلاف جاری کسانوں کے احتجاج میں مرکزی کی مودی حکومت کو ٹس سے مس نہیں کیا ہے۔ کسان کسی بھی حال دہلی کی سرحدوں سے گھر واپس ہونے کیلئے تیار نہیں ہیں۔ ان کسانوں کا کہنا ہیکہ جب تک تین سیاہ زرعی قوانین واپس نہیں لئے جاتے اور ایم ایس پی کو قانونی جامع نہیں پہنایا جاتا وہ اپنا دھرنا ختم نہیں کریں گے۔ کسان لیڈر راکیش ٹکیت نے گذشتہ روز دھمکی دی تھی کہ ہم 40 لاکھ ٹریکٹروں کے ساتھ پارلیمنٹ کا محاصرہ کریں گے۔ ان کے بعد اب کسان لیڈر پشپیندر سنگھ نے راکیش ٹکیت کی حمایت میں آواز بلند کرتے ہوئے کہا کہ عوام نے حکومت کو رامچندر بناکر گدی پر بٹھایا تھا لیکن وہ راون جیسا سلوک کررہی ہے۔ ہمیں معلوم ہیکہ راون کی جان کس میں ہے۔ عوام کا ووٹ ہی حکومت کی جان ہے۔ ہم وہیں پر حملہ کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت کسانوں کے مطالبات کو بری طرح نظرانداز کررہی ہے۔ ہمارے ذریعہ منتخب نمائندے اگر ہماری بات نہیں سنتے تو ہمارا حق ہیکہ ہم ان سے سوال کرے۔ حکومت کی پالیسیوں کی وجہ سے ملک کی معیشت تباہ ہوچکی ہے۔ سابق گورنر آر بی آئی نے لکھا ہیکہ ملک کی ڈی جی پی کا 9 فیصد ہمارے اوپر قبضہ ہوگیا ہے۔ یہ ہمارے بچوں کا مستقبل بھی خراب کرنے جارہے ہیں۔


اپنی رائے یہاں لکھیں