ممبئی:مہاراشٹر میں کورونا کے بڑھتے ہوئے معاملے پر حکومت پوری طرح سے فکرمند ہے اور اس کے لئے میٹنگوں کا دورشروع ہے۔ ایسی صورتحال میں لوگوں میں یہ خوف پیدا ہو گیا ہے کہ ایک بار پھر پوری ریاست میں لاک ڈاؤن لگ جائے گا۔ وزیر اعلیٰ ادھو ٹھاکرے نے اس بات کا اشارہ دیا ہے کہ آنے والے دنوں میں حکومت مکمل طور پر لاک ڈان کا فیصلہ کر سکتی ہے۔ اگر لاک ڈاؤن ہوتا ہے تو ان کے سامنے کتنے مسائل پیدا ہوسکتے ہیں اس بارے میں عام لوگوں میں بے چینی پھیل گئی ہے۔

سماج وادی پارٹی کے ریاستی صدر اور رکن اسمبلی ابو عاصم اعظمی نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ اگر لاک ڈاؤن مکمل طور پر کیا گیا تو عام لوگوں کا جینا مشکل ہوجائے گا ۔ اس سے پہلے جو لاک ڈاؤن لگا اس وقت لوگوں کا کاروبار چل رہا تھا اور بہت ساری غیر سرکاری تنظیموں نے ضرورت مندوں کو کھانا کھلایا تھا لیکن آج سب کی حالت خراب ہے ، لہٰذا حکومت کو چاہئے کہ وہ ہر ایک کے لئے کھانے پینے اور ادویات کا انتظام کرے۔ گرمیوں کا مہینہ ہے ،جب لوگ گھر میں رہیں گے تب بجلی کا استعمال ہوگا ۔

حکومت کو چاہئے کہ تمام گھروں کا بجلی کا بل معاف کردے ، پہلے حکومت لوگوں کا راحت دینے کا منصوبہ بنائے اور پھر اس کے بعد ہی لاک ڈان لگانے کا فیصلہ کرے۔ ابو عاصم عظمی نے بھی لوگوں سے اپیل کی ہے کہ یہ بیماری اب دائمی ہے ، لہٰذا اس کے بارے میں سب جانتے ہیں ، چنانچہ حکومت کے جاری کردہ گائیڈ لائن پر عمل کریں اور سلامت رہیں۔