حکومت ایک نہیں پچاس قانون بنالے مسلمان شریعت پر چلتا رہے گا : مولانا ارشد مدنی

0 40

نئی دہلی۔ 30 ؍دسمبر 2018
جمعیۃ علما ہند کے قومی صدر مولانا ارشد مدنی نے مرکزی سرکار کے ذریعے لوک سبھا میں پاس طلاق ثلاثہ بل پرتبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس بل کی کوئی اہمیت نہیں ہے حکومت خواہ کتنے بل کیوں نہ بنا لے لیکن جو اسلام کو مانتے ہیں وہ شریعت پر ضرور عمل کریں گے۔

مولانا مدنی نے کہا کہ حکومت اب اس بل کو راجیہ سبھا میں پیش کرے گی اس کی اطلاع پہلے سے ہی تھی لیکن اس کی اہمیت نہیں ہے۔

#مولانا_ارشد_مدنی نے کہاکہ مسلمانوں میں دوطبقے ہیں ایک وہ جس نے اپنی زندگی کو اسلام کے مطابق ڈھال لیا ہے وہیں دوسرا طبقہ وہ جو شریعت بیزار ہے ، شراب پیتا ہے، اور وہ کام کرتا ہے جو اسلام میں ناجائز ہیں ۔

مولانا مدنی نے کہاکہ آپ ایک نہیں پچاس قانون بنالیں لیکن جو مسلمان ہیں وہ سمجھتے ہیں کہ طلاق ہوگئی اور اب ہماری بچی کے ساتھ طلاق دینے والے شوہر کے ساتھ رہے گی تو اس کا رہنا ناجائز ہوگا اور اس کی اولاد بھی ناجائز ہوگی وہ اس مسئلے سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔

انہو ںنے کہاکہ ہم تین طلاق کی حمایت نہیں کرتے ہم اسے براتسلیم کرتے ہیں اور گناہ سمجھتے ہیں لیکن اتنا بڑا گناہ نہیں سمجھتے کہ اس کی بنیاد پر تین سال کی جیل کی سزا دی جائے اور اس کے بچوں اور اس کی بیوی کو بے سہارا چھوڑ دیا یہ بے وقوفی کی بات ہے۔

انہوں نے کہاکہ ایک قانون آیا ہے جس میں لڑکیوں کو وراثت نہیں ملے گی جبکہ یہ اسلامی قانون کے خلاف ہے، لڑکیوں کو بھی حق ملنا چاہئے لیکن ہمارے ملک کا قانون بنا ہوا ہے اب یہ ہمارا کام ہے کہ اگر ہمارے دل میں خدا کا خوف ہے تو لڑکیوں کو وراثت میںحصہ دیں اور مسلمان اس پر عمل بھی کررہے ہیں ایسا ہی معاملہ طلاق کا بھی ہے جو چاہتا ہے کہ اس کی زندگی شریعت کے مطابق چلے وہ اپنی زندگی کو چلائے گا جو نہیں چاہتا عدالت میں چلاجائے۔