مکہ معظمہ : حرمین شریفین کی جنرل پریذیڈینسی نے ماہ صیام کے دوران حرم مکی میں آنے والے نمازیوں اور معتمرین کے استقبال کی تیاریاں مکمل کرنے کا اعلان کیا ہے۔ مسجد حرام میں آنے والے معتمرین کے لیے کوروناکی دو خوراکوں کا حصول لازمی قرار دیا گیا ہے۔ تمام معتمرین کو’توکلنا‘ ایپ کے ذریعے رجسٹریشن کے بعد ہی حرم مکی میں داخلے کی اجازت ہوگی۔ ایسے افراد جنہوں نے کوروناویکسین کی پہلی خوراک لی ہے اور اسے 14 دن گذر چکے ہیں۔ اسے بھی مسجد حرام میں آنے اور عبادت کی اجازت ہوگی۔ ایسے افراد جو کوروناکی وبا کا شکار ہونے کے بعد صحت یاب ہوگئے ہیں وہ بھی عمرہ کی ادائی کے لیے حرم مکی میں داخل ہوسکتے ہیں تاہم تمام نمازیوں اور معتمرین کے لیے وبا کے پیش نظر اختیار کردہ ایس اوپیز پرعمل درآمد کرنا ہوگا۔حرمین شریفین کی جنرل پریذیڈینسی کے سربراہ ڈاکٹر عبدالرحمان السدیس نے 1442ھ کے ماہ صیام کے موقعے پر حرمین میں نمازیوں اور معتمرین کے استقبال کی تیاریاں مکمل کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس حوالے سے نہ صرف مسجد حرام بلکہ مسجد نبوی میںبھی ضابطہ اخلاق وضع کیا گیا ہے جس پرعمل درآمد کرنا ضروری ہے۔ڈاکٹر عبدالرحمان السدیس کا کہنا ہے کہ حرمین شریفین کی جنرل پریذیڈینسی کی تمام ذیلی شاخیں اور ایجنسیاں ماہ صیام کے لیے وضع کردہ پروگرام پر عمل درآمد کر رہی ہے۔ بیت اللہ میں آنے والے اللہ کے مہمانوں کی خدمت کے ساتھ ساتھ ان کی صحت و سلامتی کو یقینی بنانے کے تمام اقدامات کیے گئے ہیں۔ حرمین شریفین میں خدمات انجام دینے والے ملازمین کے لیے کوروناویکسین کا حصول لازمی قرار دیا گیا ہے۔ادھر حرمین شریفین کی جنرل پریذیڈینسی کے ترجمان ھانی حیدر نے بتایا کہ معتمرین اور نمازیوں کی خدمت پر مامور تمام رضاکاروں کے لیے کوروناویکسین کا حصول لازمی قرار دیا گیا ہے۔ حرمین جنرل پریذیڈینسی اور محکمہ صحت کے تعاون سے حرم مکی اور مسجد نبویؐ میں خدمات انجام دینے والے افراد کو کوروناویکسین لگانے کی مہم جاری ہے۔


اپنی رائے یہاں لکھیں