یورپ میں خواتین کے کام کے دوران تمام کمپنیوں میں حجاب کرنے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے، یہ پابندی یورپ کی اعلیٰ عدالت نے جمعرات کو لگائی ہے، اعلیٰ عدالت نے فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ تمام کمپنیاں اپنے ملازمین کو ظاہری علامت کے طور پر یا کسی مذہبی ، سیاسی اور نظریاتی علامت کے استعمال سے روک سکتی ہے۔

یورپی یونین کے 27 رکن ممالک سے لکسمبرگ میں قائم اس ٹریبونل نے کہا ہے کہ کمپنیاں یہ خود اب طے کریں کہ اس پابندی کا اطلاق ان کے ادارے میں کس حد تک ضروری ہے اس کے علاوہ عدالتی فیصلے میں کمپنیوں کو یہ ہدایت بھی کی گئی ہے کہ کوئی بھی فیصلہ کرنے سے پہلے اپنے ملازمین کے حقوق اور مذہبی آزادی کا بھی خیال رکھتے ہوئے ملکی قانون بھی مد نظر رکھا جائے۔واضح ر ہے کہ یہ کیس جرمنی سے تعلق رکھنے والی 2 خواتین کی طرف سے دائر کیا گیا تھا جنہیں دفتر میں اسکارف پہننے کی وجہ سے معطل کر دیا گیا تھا۔