’ جہیز لونگا نہ دونگی ‘ طلبہ کو اقرار ناموں پر دستخط کرنا ہوگا پڑھئے پوری خبر

968

حیدرآباد ۔ 18 ۔ مئی : ( سیاست نیوز ) : میں جہیز نہیں لوں گا اور نہیں دوں گی یہ ایسا اقرار نامہ ہے جس کے بعد کیرالا کے یونیورسٹیز اور کالجس میں لڑکے و لڑکیوں کو داخلہ دیا جاتا ہے ۔ اس اقرار نامہ پر طلبہ کے علاوہ ان کے والدین کو دستخط کرنی پڑتی ہے ۔ تعلیم کی تکمیل کے بعد شادی کے دوران اگر وہ جہیز کا مطالبہ کرتے ہیں یا قبول کرتے ہیں تو ان کے خلاف پولیس اور یونیورسٹی سے بھی شکایت کی جاسکتی ہے ۔ جس کا یونیورسٹی جائزہ لے گی جو بھی شکایتیں وصول ہوتی ہیں وہ درست ہونے پر متعلقہ شخص کی مستقل طور پر ڈگری منسوخ کردی جائے گی ۔

گورنر عارف محمد خاں جو کیرالا یونیورسٹیز کے چانسلر بھی ہیں نے دو سال قبل یہ انقلابی فیصلہ کیا تھا جو ملکؐ بھر میں موضوع بحث بنا ہوا ہے ۔ ریاست تلنگانہ میں بھی جہیز ہراسانیوں کے تدارک کے لیے اس طرح کا قانون متعارف کرانے پر سنجیدگی سے غور کیا جارہا ہے ۔ کیرالا کے قانون کے طرز پر تلنگانہ میں بھی قانون سازی کا جائزہ لینے کی تلنگانہ ویمن کمیشن کو تجاویز روانہ کی گئی ہیں ۔ جس پر تلنگانہ ویمن کمیشن نے مثبت ردعمل کا اظہار کیا ہے ۔ کیرالا حکومت کے فیصلے کا جائزہ لیتے ہوئے رہنمایانہ خطوط تیار کرنے پر ساری توجہ دی جارہی ہے ۔

عہدیداروں نے بتایا کہ تلنگانہ ہائیر ایجوکیشن کونسل اور محکمہ خواتین و اطفال بہبود کے اعلیٰ عہدیداروں کا اجلاس طلب کرتے ہوئے مختلف امور کا جائزہ لیتے ہوئے قطعی فیصلہ کرنے کے قوی امکانات ہیں ۔ ہر سال ملک میں جہیز ہراسانی کے مقدمات میں اضافہ ہورہا ہے ۔ مرکزی محکمہ شماریات کی جانب سے جاری کردہ ویمن اینڈ مین انڈیا 2022 کے سروے میں اس کا انکشاف ہوا ہے ۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ ریاست تلنگانہ اس فہرست میں 50.4 فیصد کے ساتھ دوسرے مقام پر ہے ۔ جب کہ ملک بھر میں گھریلو تشدد کے واقعات میں اضافہ ہورہا ہے ۔ آسام 75 فیصد کے ساتھ پہلے اور 48.9 فیصد کے ساتھ دہلی تیسرے مقام پر ہے ۔

گھریلو تشدد کے زیادہ تر واقعات جہیز ہراسانی سے متعلق ہیں ۔ جس پر مرکزی حکومت نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے خواتین کے تحفظ کے لیے خصوصی اقدامات کرنے کی ریاستوں کو ہدایت دی ہے ۔ خواتین پر مظالم بالخصوص جہیز کی لعنت کے خلاف عوام میں شعور بیدار کرنے کی ہدایت دی ہے ۔ اس تناظر میں مری چناریڈی ہیومن ریسورس سنٹر کے سینئیر فیکلٹی سرینواس مادھو نے جہیز کے خلاف کیرالا کی پالیسی کا مطالعہ کیا ہے ۔ دو سال سے کیرالا میں عمل ہونے والے اس قانون سے جہیز کے خلاف طلبہ اور ان کے والدین میں تبدیلی کو محسوس کیا ہے اور اس قانون پر تلنگانہ میں عمل آوری کا جائزہ لینے کی تلنگانہ ویمن کمیشن کو تجویز روانہ کی تھی ۔