جرمنی میں کووڈ کے کیسوں میں غیر معمولی اضافہ

0 0

کورونا وائرس کی عالمی وبا شروع ہونے کے بعد جرمنی میں کسی ایک دن میں کووڈ انیس کے سب سے زیادہ کیس ریکارڈ کیے گئے ہیں۔ اس پیش رفت سے حکومتی حلقوں میں تشویش کی ایک نئی لہر دوڑ گئی ہے۔

جرمنی میں متعدی امراض کی روک تھام اور ریسرچ کے ادارے رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ کی طرف سے بدھ کو جاری کیے گئے تازہ اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ چوبیس گھنٹوں میں اسی ہزار سے زائد افراد میں کووڈ انیس کی تصدیق ہوئی ہے۔ اس ایک دن کے مختصر دورانیے میں تین سو چوارسی افراد اس بیماری کی وجہ سے ہلاک بھی ہو گئے

اس سے قبل جرمنی میں کسی ایک دن میں سب سے زیادہ نئی انفیکشنز کی تعداد چھہتر ہزار تھی، جو چوبیس نومبر کو نوٹ کی گئی تھی۔ خیال ہے کہ سال نو اور کرسمس کی چھٹیوں کے دوران لوگوں کے ملنے ملانے اور سماجی رابطوں میں دوری اختیار نہ کرنے کی وجہ سے کووڈ انیس کے کیسوں میں یہ تازہ ڈرامائی اضافہ ہوا ہے۔

دسمبر سن دو ہزار انیس میں چینی شہر ووہان سے شروع ہونے والی یہ عالمی وبا اگرچہ ماضی میں بھی جرمنی کو متاثر کر چکی ہے لیکن کسی ایک دن میں اتنے زیادہ کیس ماضی میں کبھی نوٹ نہیں کیے گئے تھے۔ اس وبا کے تیزی سے پھیلاؤ کی وجہ کووڈ انیس کی تبدیل شدہ اقسام کو قرار دیا جا رہا ہے۔

بالخصوص کورونا کی نئی تبدیل شدہ قسم اومیکرون نے یورپ بھر کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے تاہم جرمنی جیسے یورپی ممالک جہاں ویکسین لگوانے کی شرح قدرے کم ہے، وہاں اس میں مبتلا ہونے کے امکانات انتہائی زیادہ بتائے جا رہے ہیں۔