مقبوضہ بیت المقدس:مقبوضہ بیت المقدس میں قابض اسرائیلی بلدیہ نے الشیخ جراح کے مقام پر دو نئے منصوبوں کی منظوری دے دی۔ فلسطینی ذرائع ابلاغ کے مطابق اسرائیلی بلدیہ نے مشرقی بیت المقدس میں الشیخ جراح کے مقام پر جنگ میں ہلاک ہونے والے چھاتابردار بریگیڈ کے فوجیوں کی ایک یادگار تعمیر کرنے کی منظوری دی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ الشیخ جراح میں ایک کنٹرول ٹاور اور چھوٹا رن وے بھی بنانے کی منظوری دی گئی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ الشیخ جراح کے مقام پر 1967ء کی جنگ میں ہلاک ہونے والے فوجیوں کی یاد میں چھاتابردار بریگیڈ 71 کے فوجیوں کی یادگار تعمیر کی جا رہی ہے۔ دوسری جانب اسرائیلی فوج اور پولیس کی طرف سے کڑی پابندیوں کے باوجود 20 ہزار فلسطینیوں نے مسجد اقصیٰ میں نماز جمعہ ادا کی۔ بیت المقدس بالخصوص قدیم شہر میں نمازیوں کی نقل وحرکت پر کڑی پابندیاں عائد کی گئی تھیں۔ مسجد اقصیٰ میں نماز جمعہ کے لیے غرب اردن سے آنے والے نمازیوں کی بسیں روک دی گئی تھیں۔ مقامی ذرائع کے مطابق قدیم بیت المقدس اور مسجد اقصیٰ کے اطراف میں درجنوں پولیس اہل کار اور فوجی تعینات کیے گئے تھے۔ پولیس کی گشتی پارٹیوں کی بڑی تعداد نمازیوں کو روکنے کی کوشش کرتی رہیں۔ نماز جمعہ کی امامت الشیخ ابو اسنینہ نے کی اور انہوںنے مسجد میں موجود تاریخی صلاح الدین ایوبیؒ منبر سے خطبہ پیش کیا۔


اپنی رائے یہاں لکھیں