چکھلی (بلڈانہ) 22 فروری.(ذوالقرنین احمد)مہاراشٹر کے ودربھ کے علاقوں میں کورونا کے مریضوں کی تعداد بڑھنے کی خبروں کی وجہ سے انتطامیہ نے پھر سے لاک ڈاؤن جیسی پابندیاں عائد کردی ہے۔ جبکہ دیگر ریاستوں میں اور بڑے بڑے شہروں میں سب کچھ نارمل حالات چل رہے ہیں۔ بلڈانہ ضلع میں بھی پھر سے رات 8 بجے سے صبح 8.30 بجے تک رات کا کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔

گزشتہ سال مرکزی حکومت کی طرف سے غیر منصوبہ بند لاک کا اعلان کیا گیا تھا اور اسکی وجہ سے ملک کی عوام کو بے حد نقصانات اٹھانے پڑے، جبکہ چھے ساتھ مہینے کے بعد اب زندگی پٹری پر آرہی تھی لیکن مہا راشٹرحکومت کی طرف سے لاک ڈاؤن نافذ کیا

جارہا ہے۔ یہ عجیب فیصلہ ہے جبکہ ویکسین بھی آچکی ہیں۔ ایک بات عجیب ہےکہ حکومت کو مہنگائی بڑھنے پٹرول ، ڈیزل، کھانے کے تیل، وغیرہ کے ریٹ بڑھنے کی فکر کیوں نہیں ہے، غریب مزدور کروڑوں

افراد کی فکر نہیں ہے بچوں بوڑھوں مریضوں کی فکر نہیں ہے لیکن یہ فکر کیوں ستا رہی ہے کہ عوام کرونا وائرس سے نا مرے۔ چکھلی شہر میں بھی پھر سے عوام پر معاشی طور پر مار پڑنے والی ہے۔

بلڈانہ ضلع میں ضروری اشیاء کے علاوہ تمام دکانیں بند کرنے گروسری ، ادویات ، سبزیوں اور آٹے کی چکی کے لئے وقت صبح 8 بجے سے شام 3 بجے تک ہے،صبح 6 بجے سے دودھ بیچنے والوں کو چھوٹ اسکے علاوہ شام چھ بجے سے ساڑھے آٹھ بجے تک ، مندرجہ بالا پانچوں شہروں میں رات 8 بجے سے صبح 8:30 بجے تک رات کا کرفیو۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق ،

کورونا کے بڑھتے ہوئے پھیلاؤ کی وجہ سے لاک ڈاؤن سخت کردیا گیا ہے۔ نئے احکامات آج شام 6 بجے سے یکم مارچ صبح 8 بجے تک نافذ العمل رہیں گے۔ بلڈانہ ، چکھلی ، کھامگاؤں ، دیولگاؤں راجہ اور ملکاپور میں پانچ میونسپل کونسل علاقوں میں لاک ڈاؤن سختی سے نافذ کیا گیا ہے۔ ضروریات کے علاوہ دیگر تمام قسم کی دکانوں کو بند کرنے کا حکم جاری کیا گیا ہے۔