بلقیس بانو معاملہ: مجرموں کی رہائی کے خلاف سپریم کورٹ میں سماعت، مرکز اور حکومت گجرات سے جواب طلب

18

نئی دہلی: سال 2002 کے گجرات فسادات میں ظلم و زیادتی کا شکار ہونے والی بلقیس بانو سے متعلق معاملہ کے 11 مجرموں کی سزا معافی اور جیل سے رہائی کے خلاف دائر کی گئی عرضی پر آج سپریم کورٹ میں سماعت کی گئی۔ سپریم کورٹ نے مجرموں کی رہائی کے خلاف دائر عرضی پر سماعت کرتے ہوئے مرکز اور حکومت گجرات کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کیا ہے۔ معاملے کی سماعت اب دو ہفتے بعد کی جائے گی۔

قبل ازیں، عرضی دائر کرنے والے وکلا میں سے ایک کپل سبل نے کہا تھا کہ ایک خاتون کے کنبہ کے 14 افراد کو قتل کیا گیا اور 5 مہینے کی حاملہ کی عصمت دری کی گئی، معاملہ کے قصورواروں کی رہائی سے متاثرہ صدمہ میں ہے، لہذا رہائی کے فیصلہ کو چیلنج کیا جا رہا ہے۔ سپریم کورٹ نے اس معاملہ پر جلد سماعت پر رضامندی ظاہر کی تھی اور چیف جسٹس این وی رمنا نے کہا تھا کہ وہ اس معاملہ پر غور کریں گے۔

خیال رہے کہ سی پی ایم لیڈر و سماجی کارکن سبھاشنی علی، انسانی حقوق کی کارکن روپ ریکھا اور صحافی و مصنفہ ریوتی لال سمیت چار افراد نے سپریم کورٹ میں مفاد عامہ کی عرضی دائر کر کے قصورواروں کی سزا معاف کرنے کے فیصلہ کو چیلنج کیا ہے۔ ان کی وکیل اپرنا بھٹ ہیں۔ ان تمام مجرموں کو 9 جولائی 1992 کی پالیسی کی تحت رہائی دی گئی ہے۔ تاہم 2014 میں ان پالیسی کے تحت سزا معافی پر کچھ شرائط بھی عائد کی گئی تھیں۔ الزام ہے کہ گجرات حکومت نے ان شرائط کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اجتماعی عصمت دری جیسے گھناؤنے جرم کے قصورواروں کی سزا معاف کر کے انہیں رہا کر دیا۔

عرضی گزاروں نے مطالبہ کیا ہے کہ قصورواروں کو دوبارہ گرفتار کر کے جیل بھیجا جائے۔ ان کا مطالبہ ہے کہ معاملہ کی تفتیش سی بی آئی نے کی تھی اور سی بی آئی عدالت نے ہی عمر قید کی سزا سنائی تھی، لہذا گجرات حکومت مجرموں کو رہا کرنے کا فیصلہ اپنے طور پر نہیں کر سکتی، اس کے لئے مجموعہ ضابطہ فوجداری کی دفعہ 435 کے تحت مرکزی وزارت داخلہ سے اجازت لینا لازمی ہے۔

یاد رہے کہ 2002 کے گودھرا میں ٹرین جلانے کے واقعے کے بعد ہونے والے فرقہ وارانہ تشدد کے دوران فسادیوں نے بلقیس کے ساتھ اجتماعی عصمت دری کی تھی۔ اس وقت وہ 21 سال کی تھیں اور پانچ ماہ کی حاملہ تھیں۔ ان کے خاندان کے 14 افراد کو فسادیوں نے قتل کر دیا تھا، تاہم موقع سے صرف 7 کی ہی لاشیں برآمد ہو سکی تھیں۔ ان کا کیس سنٹرل بیورو آف انویسٹی گیشن (سی بی آئی) کے حوالے کر دیا گیا تھا اور سپریم کورٹ کے حکم پر ٹرائل گجرات سے مہاراشٹرا منتقل کر دیا گیا تھا۔

ممبئی کی خصوصی سی بی آئی عدالت نے 21 جنوری 2008 کو بلقیس بانو کی اجتماعی عصمت دری اور خاندان کے 7 افراد کے قتل عام کے 11 مجرموں کو عمر قید کی سزا سنائی۔ بعد میں بامبے ہائی کورٹ نے بھی ان کی سزا کو برقرار رکھا۔ لیکن اب 14 سال کے بعد گجرات حکومت کے قائم کردہ پینل نے سزا معافی کے لیے ان کی درخواست کی منظور کرتے ہوئے تمام مجرموں کو رہا کر دیا۔