کورونا کے قہر نے ہندوستان کی معیشت کو زبردست طریقے سے جھٹکا دیا ہے اور اسی کا نتیجہ ہے کہ ایشیائی ڈیولپمنٹ بینک یعنی اے ڈی بی نے ہندوستانی کی معاشی ترقی کا اندازہ پہلے کے مقابلے گھٹا دیا ہے۔ اے ڈی بی نے 20 جولائی کو رواں مالی سال کے لیے ہندوستان کی معاشی ترقی کے اندازے کو گھٹا کر 10 فیصد کر دیا ہے اور اس کی وجہ بے قابو کورونا کو ٹھہرایا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ اے ڈی بی نے گزشتہ اپریل میں ہندوستان میں معیشت کی شرح ترقی 11 فیصد رہنے کا اندازہ ظاہر کیا تھا۔ کثیر جہتی معاشی ایجنسی نے ایشین ڈیولپمنٹ آؤٹ لُک (اے ڈی او) میں کہا ہے کہ مارچ 2021 کو ختم مالی سال کے آخری سہ ماہی میں ہندوستان کی جی ڈی پی شرح ترقی 1.6 فیصد تھی، جس کے سبب پورے مالی سال کے دوران کنٹریکشن 8 فیصد کی پیشین گوئی کے مقابلے 7.3 فیصد رہی۔

اے ڈی بی کا کہنا ہے کہ شروعاتی اشاروں سے پتہ چلتا ہے کہ لاک ڈاؤن کی ترکیبوں میں ڈھیل کے بعد معاشی سرگرمیاں پھر شروع ہو گئی ہیں جو معیشت کے لیے بہتر اشارہ ہے۔ اے ڈی او 2021 میں مالی سال 2021 (مارچ 2022 کو ختم) کے لیے اضافے کا اندازہ 11 فیصد سے گھٹا کر 10 فیصد کر دیا گیا ہے، جو بڑے بنیادی اثر کو ظاہر کرتا ہے۔ اس کے علاوہ مالی سال 23-2022 کے لیے اضافے کی پیشین گوئی کو 7 فیصد سے بڑھا کر 7.5 فیصد کر دیا گیا ہے۔