• 425
    Shares

نئی دہلی، 5 اکتوبر (یوا ین آئی) آسام میں پولیس فائرنگ کی سخت مذمت کرتے ہوئے آل انڈیا کانگریس کمیٹی شعبہ اقلیت کے قومی صدر عمران پرتاپ گڑھی نے کہا کہ ہمیں بی جے پی حکومتوں کے جبر کے خلاف ہر محاذ پر لڑنا ہے، ایک طرف یوپی میں کسانوں کو کچلا جا رہا ہے تو دوسری طرف آسام میں پولیس کی گولیوں نے مبینہ طور پر معین الحق اور شیخ فرید کو قتل کیا ہے۔ انہوں نے یہ بات اپنے ایک روزہ دورہ آسام کے دوران وہ دھول پور میں معین الحق اور شیخ فرید کے گھر پہنچنے کے بعد کہی۔

 

مسٹر عمران اپنی پوری ٹیم کے ساتھ آسام کے دھول پور گاؤں پہنچے اور پولیس کے ہاتھوں ہلاک ہونے والے معین الحق اور شیخ فرید کے اہل خانہ کو ایک لاکھ کی مالی مدد فراہم کی۔ ساتھ ہی انہوں نے زخمیوں کے علاج اور قانونی اس کے لیے آسام کانگریس اقلیتی محکمہ کو ہدایت دی گئی۔ آسام میں کانگریس کے ڈپٹی لیڈر آف اپوزیشن اور سابق وزیر رقیب الحسن اور ریاستی چیئرمین سلمان خان نے کئی ممبران اسمبلی کے ساتھ عمران پرتاپ گڑھی کا استقبال کیا اور ان کے ساتھ ائیرپورٹ سے موقع پر پہنچے اور واپسی پر گوہاٹی میں پریس ساتھیوں سے خطاب کیا۔

عمران پرتاپ گڑھی نے الزام لگایا کہ وزیر اعلیٰ ہیمنت بسوا سرما کی فرقہ وارانہ پالیسی نے آسام کے سماجی اتحاد کو برباد کر دیا ہے، وزیر اعلیٰ پولیس کی اس فائرنگ کو مسلسل جواز بنا رہے ہیں، میڈیا سے ایک سوال کہ معین الحق کے ہاتھ میں گولی لگی تھی، لاٹھی کیوں تھی، تب عمران پرتاپ گڑھی نے جواب دیا کہ اگر لاٹھی مہاتما گاندھی کے ہاتھ میں ہوتی تو کیا دو درجن پولیس والے مل کر ایک شخص کو سینے پر گولی مارتے؟ دو دریا عبور کرنے کے بعد ڈھول پور گاؤں پہنچنے والے عمران پرتاپ گڑھی نے وہاں کی صورتحال دیکھی، میڈیا کو بتایا کہ جہاں لوگوں کے پہنچنے کا کوئی راستہ نہیں ہے، وہاں رہنے کے لیے کوئی شیڈ نہیں ہے، پینے کے پانی کے لیے نل نہیں ہے۔

انہوں نے الزام لگایا کہ وزیراعلی مسلم معاشرے کے لوگوں کو تباہ کرنا چاہتے ہیں، آخر وہ اپنے دل میں اتنی نفرت رکھ کر ریاست کیسے چلا سکے گا؟ عمران جو معین الحق کے 2 سالہ بیٹے مقدس علی سے ملنے کے بعد جذباتی ہو گئے، نے وزیر اعلیٰ ہیمنت سے اپیل کی ہے کہ آپ بھی ایک باپ کے بیٹے ہیں، آپ ایک بیٹے کے باپ ہیں، کم از کم تھوڑی سی انسانیت اور جمہوریت کو بچائیں۔

عمران پرتاپ گڑھی نے کہا کہ آسام کی بی جے پی حکومت لوگوں کو اس گاؤں میں آرام سے رہنے کی اجازت نہیں دینا چاہتی ہے جہاں پہنچنے کے لیے پہلے کشتی، پھر ٹریکٹر ٹرالی، پھر موٹر سائیکل استعمال کرنا پڑتی ہے۔ انہوں نے اعلان کیا ہے کہ وہ پورے معاملے کی رپورٹ راہل گاندھی کو پیش کریں گے۔ اس موقع پر عمران پرتاپ گڑھی کے ساتھ وحید قریشی، احمد خان، فہیم احمد، محمد شمیم، فرحان اعظمی، شیوکمار دوبے، سشیل یتی، شمسرویش بارش، مینارل قریشی موجود تھے۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔