نئی دہلی ، 10 فروری (یواین آئی) دہلی کی ایک عدالت نے بدھ کے روز سابق مرکزی وزیر ایم جے اکبر کے ذریعہ صحافی پریہ رمانی کے جنسی استحصال کے الزامات کے خلاف دائر ہتک عزت کیس میں فیصلہ 17 فروری تک ملتوی کردیا ۔

راؤز ایونیو عدالت کے جج روندر کمار پانڈے نے فیصلہ کے اعلان کے بعد تاریخ موخر کردی کیونکہ بدھ کے روز دیر سے کچھ تحریری گذارشات عدالت میں پیش کی گئیں۔ اس سے قبل عدالت نے کیس کی سماعت کے بعد یکم فروری کو اس معاملہ پر فیصلہ محفوظ کرلیا تھا۔2017 میں ’می ٹو مہم‘ کے دوران رمانی نے الزام لگایا کہ ان کو 1994 میں انگریزی روزنامہ ’ایشین ایج ‘میں ملازمت کے انٹرویو کے دوران ایم جے اکبر نے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا تھا۔ رمانی اس وقت ’ایشین ایج‘ کی ایک رپورٹر ہوا کرتی تھیں ۔

رمانی پہلی خاتون صحافی تھیں جن پر ایم جے اکبر کے خلاف جنسی استحصال کا الزام لگایا گیا تھا۔ اس کے بعد بہت سی دوسری خواتین نے بھی اسی طرح کے الزامات عائد کئے تھے۔ایم جے اکبر نے اس وقت مرکزی وزیر کے عہدہ سے استعفیٰ دے دیا تھا لیکن انھوں نے اپنے اوپر عائد تمام الزامات کو بھی مسترد کردیا تھا اور عدالت میں ہتک عزت کا مقدمہ بھی دائر کیا تھا۔