• 425
    Shares

لکھنؤ۔ اترپردیش کے تین بار وزیر اعلیٰ رہے بی جے پی رہنما کلیان سنگھ کی موت ہوگئی ہے ۔ کلیان سنگھ اس وقت بھی وزیر اعلیٰ تھے جب بابری مسجد شھید کی گئی تھی اور کلیان سنگھ کو بھی جس میں ملزم قرار دیا گیا تھا۔ جسے بعد میں باعزت بری کر دیا گیا تھا بتادیں کہ کلیان سنگھ کو 4 جولائی کو تشویشناک حالت میں پی جی آئی منتقل کیا گیا تھا۔

سانس لینے میں دشواری بڑھنے پر 17 جولائی کو آکسیجن سپورٹ دی گئی۔ اگلے دن 18 جولائی کو گلے میں ایک ٹیوب داخل کی گئی کیونکہ پھیپھڑوں کو مطلوبہ آکسیجن نہیں مل رہی تھی۔

21 جولائی کو زیادہ مسائل کی وجہ سے وینٹیلیٹر سپورٹ پر رکھ دیا گیا، آخر میں گردوں میں دقت کے بعد ڈاکٹروں نے ڈائلیسس شروع کردی تھی اور آج انکی موت
بتادیں کہ کلیان سنگھ کی طبیعت تقریبا دو مہینے سے خراب تھی ۔ لکھنو کے ایس جی پی جی آئی میں انہیں علاج کیلئے بھرتی کرایا گیا تھا ۔ انہیں لائف سپورٹ سسٹم پر رکھا گیا تھا ۔ وہ 89 سال کے تھے ۔ بی جے پی کی سینئر لیڈر کلیان سنگھ کے انتقال کے بعد وزیر اعلی یوگی نے اپنا گورکھپور کا دورہ رد کردیا ہے ۔ بتادیں کہ کلیان سنگھ اترپردیش کے وزیر اعلی رہنے کے علاوہ راجستھان کے گورنر رہ چکے ہیں ۔ انتقال کی خبر ملتے ہی بی جے پی میں غم کی لہر دوڑ گئی ہے ۔

لکھنو پی جی آئی نے ہفتہ دیر شام ایک بیان جاری کرتے ہوئے بتایا کہ اترپردیش کے سابق وزیر اعلی اور راجستھان کے سابق گورنر کلیان سنگھ جی کا ایک طویل بیماری کے بعد آج انتقال ہوگیا ۔ انہیں چار جولائی کو سنجے گاندھی پی جی آئی کے Critical Care medicine کے آئی سی یو میں سنگین حالت میں بھرتی کیا گیا تھا ۔ طویل بیماری اور جسم کے کئی اعضا کے دھیرے دھیرے ناکام ہونے کی وجہ سے انہوں نے آج آخری سانس لی ۔

کلیان سنگھ کو 21 جون کو لکھنو کے لوہیا انسٹی ٹیوٹ میں بھرتی کیا گیا تھا ۔ چار جولائی کو جب سب سے پہلے ان کی طبیعت زیادہ خراب ہوئی تھی تو اترپردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ انتھ ان سے ملنے کیلئے پہنچے تھے ۔

تھوڑی دیر کے بعد وزیر دفاع راجناتھ سنگھ بھی اسپتال پہنچے تھے ۔ نیز ریاست کے نائب وزیر اعلی کیشو پرساد موریہ سمیت ریاستی حکومت کے کئی وزرا بھی کلیان سنگھ کی کیفیت جاننے کیلئے اسپتال گئے تھے ۔ بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا ، بی ایل سنتوش سمیت بی جے پی تنظیم کے تمام بڑے لیڈران کلیان سنگھ کی طبیعت جاننے کیلئے پی جی آئی پہنچے تھے ۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔